ڈینگی کا حل بھی مچھروں سے ممکن ہے؟

ڈینگی کے خلاف مزاحمت کے حوالے سے ایک حیرت انگیز پیش رفت سامنے آئی ہے۔ اب چھوٹے سے جراثیم اور مچھر کی وجہ سے پھیلنے والے ڈینگی وائرس کو شکست دی جا سکے گی۔

اس بات میں کوئی شک نہیں کہ انسانوں کو مہلک ڈینگی نے کسی بھی دوسرے جانور سے زیادہ نقصان پہنچایا ہے۔ تاہم اب یہ انکشاف ہوا ہے کہ ڈینگی بخار کے خلاف مزاحمت کے لیے مچھر ہی کارگر ہے، جس کے جرثومہ میں ڈینگی کے خلاف کمال کی مزاحمت موجود ہے۔

ڈینگی بخار ایک وائرس ہے جو ایڈیز ایجپٹی مچھر کے کاٹنے سے پھیلتا ہے۔ یہ “بریک بون فیور” کے نام سے جانا جاتا ہے کیونکہ اس کی وجہ سے شدید درد ہوتا ہے، ڈینگی سال قریباً 4 کروڑ افراد کو متاثر کرتا ہے اور 20000 سے زائد افراد اس وائرس کی وجہ سے موت کے منہ میں چلے جاتے ہیں۔


موسمیاتی تبدیلی کی وجہ سے گرم درجہ حرارت نے مچھروں کی جغرافیائی حد کو بڑھا دیا ہے، حالیہ برسوں میں ڈینگی کے کیسز کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے۔ تاہم ورلڈ موسکیٹو پروگرام کے ساتھ کام کرنے والے محققین ایک ایسی پیش رفت پر کام کر رہے ہیں جس کے بارے میں کہا جا رہا ہے کہ شاید اس کی بدولت ڈینگی کو مکمل طور پر شکست دی جا سکے۔

یہ پیش رفت Wolbachia اور Aedes aegypti مچھر نامی ایک چھوٹے سے جراثیم پر منحصر ہے۔ وولباچیا ایک عام اور بے ضرر جراثیم ہے جو 60 فیصد کیڑوں میں پایا جاتا ہے، بشمول مکھیوں، پتنگوں اور تتلیوں کے۔ لیکن یہ ایڈیس ایجپٹی مچھروں میں نہیں پایا جاتا۔

ایک دہائی پہلے محققین نے وولباچیا کے بارے میں ایک حیران کن دریافت کی تھی۔ اگر وولباچیا ایڈیس ایجپٹی مچھروں کو دیا جائے تو یہ انہیں ڈینگی وائرس منتقل کرنے سے روکتا ہے۔ ریسرچرز یہ معلوم کرنے میں کامیاب ہوئے کہ وولباچیا مچھروں میں اس وقت تیزی سے پھیلتا ہے جب وہ ملتے ہیں، یہی وجہ ہے کہ یہ مچھروں کی ایک نسل سے دوسری نسل میں ڈینگی کے پھیلاؤ کو روکتے ہیں۔

یہ تمام ابتدائی تحقیق ایک لیب کی حد تک انجام پائی۔ اگلا مرحلہ یہ جانچنا تھا کہ آیا یہ نقطہ نظر حقیقی دنیا میں بھی کام کرے گا۔ اگر وولباچیا مچھروں کو کسی کمیونٹی میں چھوڑ دیا جائے تو کیا یہ ڈینگی کے معاملات میں کمی کا باعث بنے گا؟

یہ وہ تجربہ ہے جو ورلڈ موسکیٹو پروگرام کے تحت کیا گیا جو ڈینگی اور دیگر مچھروں سے پیدا ہونے والی بیماریوں کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے کام کرنے والا ایک غیر منافع بخش ادارہ ہے اور انڈونیشیا کے شہر یوگیا کارتا میں کام کرتا ہے۔ ٹرائل کے طور پر ماہرین نے وولباچیا مچھروں کو یوگیا کارتا شہر کے کچھ حصوں میں جاری کیا، جہاں جہاں ڈینگی بخار کی سب سے زیادہ شرح تھی۔

ڈینگی سے لڑنے کا ایک غیر روایتی حل یہ ہے کہ رہائشی محلوں میں مچھروں کو مفت رکھا جائے۔ عوامی اعتماد حاصل کرنے کے لیے ریسرچر نے مقامی کمیونٹی کے ساتھ تعلق قائم کیا۔ انھوں نے شہر کے ہزاروں لوگوں سے ملاقات کی اور پروگرام کے بارے میں ان کے خدشات کو دور کیا۔

عوامی رسائی کی ان کوششوں میں مہینے نہیں بلکہ سال لگے۔ جون میں نیو انگلینڈ جرنل آف میڈیسن نے ٹرائل کے نتائج شائع کیے، جن سے آیا کہ وولباچیا لے جانے والے مچھروں سے ڈینگی کیسز میں 77 فیصد کمی واقع ہوئی اور ڈینگی کی وجہ سے ہسپتالوں میں داخل ہونے والے مریضوں کی تعداد میں 86 فیصد کمی دیکھی گئی۔

اب عالمی موسکیٹو پروگرام دنیا کے دیگر حصوں میں بھی ڈینگی سے نمٹنے کے لیے کوشاں ہے جن میں سری لنکا، ویت نام، برازیل، کولمبیا، میکسیکو، آسٹریلیا اور فجی سمیت دیگر ممالک شام ہیں۔ یہ دنیا کے وہ حصے ہیں جہاں ڈینگی کا خطرہ بڑھ رہا ہے۔

یہ کوشش نہ صرف ڈینگی بلکہ زیکا، زرد بخار اور دیگر بیماریوں کو پھیلنے سے روکنے میں کارگر ثابت ہو سکتی ہے۔ اس کوشش پر خرچ ہونے والے ہر ڈالر سے صحت کی دیکھ بھال کی دیکھ بھال ممکن ہے، جس سے اربوں ڈالر کی بچت ہو سکے گی۔ کیونکہ بیماریوں سے دوچار افراد اس طرح سے کام نہیں کر سکتے جس طرح ایک صحت مند فرد کام کرنے کی اہلیت رکھتا ہے۔ لہذا اس کوشش سے معاشی فوائد حاصل کرنے کی توقع ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں