صدارتی انتخابات: امیدواروں کی فہرست سے سیف الاسلام قذافی کا نام خارج

تریپولی: (ویب ڈیسک) لیبیا کے نیشنل الیکشن کمیشن نے آئندہ ماہ کے آخر میں ہونے والے صدارتی انتخابات کے لیے امیدواروں کی فہرست سے 25 امیدواروں کو خارج کر دیا ہے، جن میں مرحوم رہنما معمر قذافی کے بیٹے سیف الاسلام قذافی بھی شامل ہیں۔

قانونی تقاضے پورے کرنے والے امیدواروں کی ابتدائی فہرست میں 73 امیدوار شامل تھے، تاہم ان میں سے سیف الاسلام قذافی کو خارج کر دیا گیا کیونکہ وہ جنگی جرائم کے ارتکاب کے الزام میں بین الاقوامی فوجداری عدالت کو مطلوب ہیں۔

انتخابی قانون کے آرٹیکلز میں یہ شرط رکھی گئی ہے کہ امیدواروں کو “اخلاقی پستی میں ملوث کسی جرم کا مجرم نہیں ٹھہرایا جانا چاہیے” اور انہیں صاف ستھرا ریکارڈ پیش کرنا چاہیے۔

کمیشن نے کہا کہ اس نے 25 امیدواروں کو قانونی بنیادوں پر مسترد کیا ہے۔ ان متنازعہ صدارتی امیدواروں میں فوجی کمانڈر خلیفہ حفتر بھی شامل ہیں۔ لیکن تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ ان کی امریکی شہریت انہیں انتخاب لڑنے کے لیے نااہل قرار دے سکتی ہے۔

انتخابی دوڑ میں شامل دیگر امیدواروں میں عبوری وزیراعظم عبدالحمید دبایبہ اور سابق وزیر داخلہ فاتی باشاغہ شامل ہیں، جن کی درخواستیں کمیشن نے درست قرار دی ہیں۔

لیبیا میں امریکہ، برطانیہ، فرانس، جرمنی اور اٹلی کے سفیروں نے اس سے قبل تمام فریقوں سے مطالبہ کیا تھا کہ وہ نامزدگیوں کے عدالتی نظر ثانی کے ذمہ دار حکام کے فیصلوں کا احترام کریں۔

دریں اثنا، اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے لیبیا کے صدارتی انتخابات وقت پر کرانے کی حمایت کا اعلان کیا۔

کونسل نے تمام جماعتوں پر زور دیا کہ وہ رائے شماری کے نتائج کو قبول کرنے کا عہد کریں، اور ان سے کہا کہ وہ انتخابات سے پہلے، دوران اور بعد میں سیاسی مخالفین کا احترام کریں۔

تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ حفتر کی امریکی شہریت انہیں انتخاب لڑنے کے لیے نااہل قرار دے سکتی ہے۔ امیدواروں کی حتمی فہرست دسمبر کے اوائل تک شائع ہو جائے گی، ایک بار تصدیق اور اپیلیں مکمل ہو جائیں گی۔

صدارتی اور قانون ساز دونوں انتخابات 24 دسمبر کو ہونے والے تھے، لیکن اکتوبر کے شروع میں پارلیمنٹ نے ووٹنگ کی تاریخوں کو تقسیم کر دیا، قانون سازی کے انتخابات جنوری تک ملتوی کر دیے گئے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں