خبردار! دنیا میں آنیوالی نئی وبا بہت زیادہ مہلک ہوگی

لندن: (ویب ڈیسک) کورونا وائرس سے بچائو کی ویکسین آسٹرازینکا بنانے والی سائنسدان نے کہا ہے کہ مستقبل میں ہونے والی وبائی بیماریاں موجودہ وبائی بحران سے بھی زیادہ ہوں گی۔

پروفیسر ڈیم سارہ گلبرٹ نے ایک کانفرنس میں دیئے گئے اپنے لیکچر میں کہا کہ وبائوں سے بچائو کی ادویات بنانے کی تیاری کے لیے مزید فنڈنگ کی ضرورت ہے تاکہ ان کے پھیلنے کو روکا جا سکے۔

انہوں نے یہ بھی خبردار کیا کہ کورونا وائرس کی نئی قسم اومیکرون پر ویکسین کا اثر کم ہوسکتا ہے۔

گلبرٹ نے کہا کہ جب تک اس نئی قسم کے بارے میں مزید معلومات سامنے نہیں آتی، لوگوں کو بھی محتاط رہنے کی ضرورت ہے۔

اس لیکچر میں، انہوں نے کہا کہ یہ آخری موقع نہیں کہ کسی وائرس نے ہماری زندگیوں اور معاش کو خطرہ بنایا ہو۔ سچ تو یہ ہے کہ اگلی وبائی بیماری اس سے بھی بدتر ہو سکتی ہے۔ یہ زیادہ متعدی اور زیادہ مہلک دونوں ہوسکتی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ”ہو سکتا ہے کہ ہم دوبارہ ایسی صورتحال میں نہ ہوں جہاں ہم وہ سب کچھ دیکھ سکیں جو ہم نے اس بار دیکھا ہے، لیکن کورونا کی وجہ سے ہونے والے بہت بڑے معاشی نقصان کی وجہ سے، ہمارے پاس وبائی مرض کی تیاری کے لیے فنڈز نہیں ہیں۔ ہم نے اس سے سیکھا ہے اور ہمارا تجربہ ضائع نہیں ہونا چاہیے۔”

اومیکرون ویریئنٹ کے بارے میں بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس کے سپائیک پروٹین میں ایک میوٹیشن ہے جو وائرس کے انفیکشن کو بڑھانے کا کام کرتا ہے۔ جب تک ہم اس نئے تناؤ کے بارے میں مزید نہیں جانتے، ہمیں چوکنا رہنا چاہیے اور اس کے پھیلاؤ کو کم کرنے کی کوشش کرنی چاہیے۔

تاہم انہوں نے یہ بھی کہا کہ ویکسین کے کم اثر کے امکان کا مطلب یہ نہیں ہے کہ انفیکشن بہت سنگین ہو سکتا ہے یا موت کا سبب بن سکتا ہے۔

گلبرٹ نے وبائی امراض کے دوران ویکسین کی تیزی سے توسیع اور دوائیوں کی تقسیم کو دیگر بیماریوں پر بھی لاگو کرنے پر زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ انفلوئنزا جیسی دیگر بیماریوں کے لیے بھی یونیورسل ویکسین بنائی جانی چاہیے۔

خیال رہے کہ ہفتے کے روز برطانوی حکومت نے اعلان کیا تھا کہ اب برطانیہ جانے والے تمام مسافروں کو روانگی سے پہلے کووڈ ٹیسٹ کرانا ہوگا۔

اومیکرون وائرس کے پھیلنے کے بعد سے برطانیہ نے جنوبی افریقہ سمیت بعض افریقی ممالک پر سفری پابندیاں عائد کر دی ہیں اور اب نائجیریا بھی اس فہرست میں شامل ہو گیا ہے۔ منگل سے، 12 سال یا اس سے زیادہ عمر کے مسافروں کو سفر سے 48 گھنٹے پہلے منفی پی سی آر رپورٹ دکھانی ہوگی۔

ادھر حکومت کے ایک مشیر سائنسدان پروفیسر مارک وول ہاؤس نے کہا ہے کہ حکومت نے سفر کے قوانین کو تبدیل کرنے میں بہت زیادہ وقت لیا، اب چیزیں ہاتھ سے نکل چکی ہیں۔ برطانیہ میں اومیکرون مختلف قسموں کی ممکنہ لہر کو روکنے کے لیے نئے سفری قوانین کو بہت تاخیر سے نافذ کیا گیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کیہ اومیکرون برطانیہ میں بہت تیزی سے پھیل رہا ہے۔ اگر یہاں اور جنوبی افریقہ میں موجودہ صورتحال برقرار رہی تو آنے والے ہفتوں میں مہینوں، یہ ڈیلٹا کو پیچھے چھوڑ دے گا۔

اتوار کو برطانیہ میں اومیکرون کے 86 نئے کیسز سامنے آئے اور اب تک ملک میں انفیکشن کی کل تعداد 246 تک پہنچ گئی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں