زمین کے علاوہ کہیں بھی زندگی ہے، کیا واقعی ایلین ہیں؟

کیلیفورنیا: (ویب ڈیسک) کیا زمین کے علاوہ کائنات میں کہیں بھی زندگی موجود ہے؟ اور اگر ہے تو وہ کیسی ہے؟ یہ سائنسدانوں کے لیے ایک بڑا سوال ہے۔

اس سال جون میں، امریکی حکومت نے Unidentified Flying Objects ( UFOs ) سے متعلق ایک رپورٹ کا اعلان کیا ، جس میں کہا گیا تھا کہ اب تک زمین پر ایلین کے کوئی شواہد نہیں ملے۔ تاہم رپورٹ میں ان کے امکان کو رد نہیں کیا گیا۔

نٹالی ہینس ایک مصنف اور سائنس فکشن میں دلچسپی رکھتی ہیں۔ وہ بتاتی ہیں کہ دو ہزار سال پہلے جب نہ خلائی رصد گاہ تھی اور نہ ہی خلائی جہاز کا تصور، اس وقت لوسیئن نامی یونانی مصنف نے اپنی کتاب میں زمین سے دور زندگی کا ذکر کیا تھا۔

اپنی کتاب میں، لوسیئنز نے چاند پر بڑے پروں والے گھوڑوں، دیوہیکل گدھوں، ہاتھیوں اور عجیب وغریب لوگوں کے بارے میں لکھا جنہیں ایلین کہنا غلط نہیں ہوگا۔

تقریباً آٹھ سو سال بعد، ایک اور سائنس فکشن کہانی ‘دی بانس کٹر کی بیٹی’ دسویں صدی کے جاپان میں لکھی گئی۔

نٹالی کہتی ہیں کہ کہانی کچھ یوں ہے کہ ایک دن بانس کاٹنے والے شخص نے اس کے اندر ایک روشن روشنی دیکھی، اسے وہاں ایک چھوٹی سی لڑکی ملی جسے وہ گھر لے آیا اور اسے اپنی بیٹی کی طرح پالا، بعد میں لڑکی نے بتایا کہ وہ ”چاند” سے آئی ہے۔

لیکن ایسا کیوں ہے کہ پہلی کہانیوں میں جن میں ایلین کا ذکر ہے، ان میں چاند کا بھی ذکر ہے۔

نٹالی کے مطابق، “یہ سچ ہے کہ چاند کے بارے میں کافی عرصے سے لکھا جا رہا ہے۔ شاید اس کی وجہ یہ ہے کہ چاند زمین سے تو صاف نظر آتا ہے لیکن زہرہ یا مریخ نظر نہیں آتے۔” لیکن جلد ہی مریخ بھی زمین پر بحث کا موضوع بن گیا۔

1870ء کی دہائی میں، ایک اطالوی ماہر فلکیات Giovanni Virginio Schiaparelli نے دوربین سے مریخ کا مشاہدہ کیا اور اس کے بارے میں بہت تفصیل سے لکھا۔

کچھ سال بعد، 1881 میں، مریخ کے زمین پر حملہ کرنے کی ایک افسانوی کہانی لندن ٹروتھ نامی میگزین میں شائع ہوئی۔ چند سال بعد، ایک پولش پادری نے ‘Elleriel – A Voyage to Other Worlds’ کے نام سے ایک کتاب لکھی، جس میں اس نے مریخ پر رہنے والے نو فٹ لمبے سبزی خور لوگوں کا ذکر کیا۔ پہلی بار اس نے ان کے لیے Martian کا لفظ استعمال کیا۔

اس کے بعد بہت سے لوگوں نے مریخ سے روشن کی کرن دیکھنے کے دعوے کئے۔ اس عرصے کے دوران، ایچ جی ویلز کی کتاب ‘دی وار آف دی ورلڈز’ کی تھیٹریکل موافقت ریڈیو پر نشر کی گئی۔ اورسن ویلز نے اس کہانی کو نیوز بلیٹن سیریز کی شکل میں اس طرح بیان کیا کہ سننے والوں کا خیال تھا کہ مریخ نے زمین پر حملہ کر دیا ہے۔

سائنس کی ترقی کے ساتھ ساتھ کتابوں اور کہانیوں پر فلمیں بنائی گئیں، جس سے نوجوان سائنسدانوں میں ایلین کے بارے میں جاننے کی خواہش کو تقویت ملی۔

1960ء کی دہائی میں، ایک نوجوان سائنسدان، فرینک ڈریک نے تجویز کیا کہ پہلی جنگ عظیم کے دوران تیار کی گئی ریڈیو ٹیکنالوجی کو ایک نظام شمسی سے دوسرے نظام شمسی میں سگنل بھیجنے کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے، اور یہ کہ ایلین بھی ایسا ہی کر رہے ہیں۔ ایسے میں ان کے وجود کو تلاش کرنے کے لیے ہمیں صرف ان کا اشارہ پکڑنا پڑتا ہے۔

سیٹھ شوسٹاک ایک سینئر ماہر فلکیات ہیں جو سرچ فار ایکسٹرا ٹریسٹریل انٹیلی جنس (SETI) میں ہیں۔ پچھلی چار دہائیوں سے وہ ایلینز سے اسی طرح کے سگنل سننے کی کوشش کر رہے ہیں۔

وہ کہتے ہیں، “فرینک نے مغربی ورجینیا میں آبزرویٹری میں موجودہ ریڈیو اینٹینا کو قریب ترین ستارے کی طرف موڑ دیا۔ وہ یہ پکڑنے کی کوشش کر رہا تھا کہ آیا غیر ملکی سگنل بھیج رہے ہیں۔ وہ دو ستاروں کی طرف دیکھ رہا تھا۔

مضحکہ خیز بات یہ تھی کہ وہ نہیں ملے۔ ایک ستارے سے کوئی سگنل لیکن دوسرے سے کچھ آوازیں سنائی دیں۔ ان کا خیال تھا کہ انہیں ایلین مل گیا ہے حالانکہ یہ فوجی طیارہ ہو سکتا تھا۔

جلد ہی پوری دنیا کے سائنس دان غیر ملکیوں کے نشانات تلاش کر رہے تھے۔ 1980ء کی دہائی میں، امریکی حکومت نے غیر ملکیوں کی تلاش کے لیے SETI انسٹی ٹیوٹ کو فنڈ دینا شروع کیا۔

ریڈیو لہریں خلا میں آسانی سے سفر کر سکتی ہیں اور سیٹھ جو آواز ریڈیو ریسیور پر سننا چاہتا تھا وہ عام آوازوں سے مختلف تھی۔ سیٹھ نے تخروپن کا استعمال ایک ایسی آواز بنانے کے لیے کیا جو اجنبی سگنل کی طرح لگتی تھی، تاکہ یہ سمجھا جا سکے کہ وہ کیا ڈھونڈ رہے ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ “سن کر ایسا لگتا ہے کہ کوئی نیاگرا فالز کے قریب کھڑا بانسری بجا رہا ہے۔ ریسیور پر نیاگرا فالز کی آواز خلا کے خالی پن کی آواز کی طرح لگے گی لیکن یہ دھن کے بجائے آواز کی طرح لگے گی۔”

سیٹھ اور ان کی ٹیم کو معلوم تھا کہ وہ کیا تلاش کر رہے ہیں، لیکن مشکل یہ تھی کہ انہیں لاکھوں ریڈیو فریکوئنسیوں کو دیکھنا تھا، پھر انہیں کیسے معلوم تھا کہ کون سی چیز پہلے دیکھنا ہے۔

وہ کہتے ہیں، “یہ ایک بڑا مسئلہ تھا۔ خلائی مخلوق نے مجھے یہ پیغام نہیں بھیجا کہ میں کس فریکوئنسی پر ٹیون ان کرنا چاہتا ہوں۔ اس لیے مجھے ہر فریکوئنسی کو چیک کرنا پڑا۔ لیکن ایسا کرنا وقت کا ضیاع تھا۔ ہمیں ریسیورز کی ضرورت ہے۔ ٹیون ان کر سکتے ہیں۔” تمام چینلز کو ایک ساتھ سنیں۔

1990ء تک یہ بھی ممکن ہو گیا اور ایسے کمپیوٹر بنائے گئے جو بیک وقت لاکھوں فریکوئنسی کو سن سکتے تھے۔

اوہائیو یونیورسٹی کے ماہرین فلکیات ریڈیو دوربین کے ڈیٹا کو دیکھ رہے تھے اور انہیں انتہائی زیادہ شدت اور تعدد کے سگنل ملے۔ ان کا خیال تھا کہ یہ غیر ملکیوں کا اشارہ ہے۔

سوال یہ پیدا ہوا کہ حکومتوں کا ایسے منصوبوں پر اربوں خرچ کرنا کہاں تک درست ہے، جن کا کوئی نتیجہ نہیں نکلتا۔ 1990ء کی دہائی کے اوائل میں، SETI انسٹی ٹیوٹ کو ملنے والی حکومتی امداد بند ہو گئی۔ لیکن یہ خلائی مخلوق غیر ملکیوں کی تلاش کا اختتام نہیں تھا۔

ڈیوڈ گرنسپون ایک فلکیاتی ماہر اور سیارہ سائنس انسٹی ٹیوٹ کے سینئر سائنسدان ہیں۔ وہ خلائی تحقیق پر ناسا کے مشیر رہ چکے ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ ایلین کی دریافت پر اعتماد بھی کم ہوا کیونکہ اس وقت تک مزید سیاروں کی دریافت نہیں ہو سکتی تھی۔ لیکن 90ء کی دہائی کے اوائل سے، سائنسدانوں نے ہمارے اپنے نظام شمسی میں نئے چھوٹے سیارے اور بونے سیارے دریافت کیے ۔

اور ایک بار پھر یہ سوال پیدا ہوا کہ کیا ہمارے نظام شمسی سے باہر بھی ایسے سیارے ہوسکتے ہیں جہاں زندگی ہے۔

مارچ 2009ء میں، ناسا نے کیپلر خلائی جہاز لانچ کیا۔ اس میں دوربین کے ساتھ ایک رصد گاہ تھی جس کا مقصد زمین سے باہر زندگی کو تلاش کرنا تھا۔

ڈیوڈ کہتے ہیں، “کیپلر ایک چالاک خیال تھا۔ یہ ایسا تھا کہ آپ نے اسے زمین سے دور ایسی جگہ پر رکھا جہاں سے وہ پوری جگہ پر نظر رکھ سکے۔”

کیپلر نے کئی سالوں تک ستاروں پر نظر رکھی۔ اس کا کام یہ دیکھنا تھا کہ ستارے سے آنے والی روشنی بدلتی ہے یا نہیں۔

وہ بتاتے ہیں، “اگر روشنی میں کوئی تبدیلی آتی ہے، تو اس کا مطلب ہے کہ ہمارے اور اس ستارے کے درمیان کوئی چیز گزر رہی ہے، وہ کوئی سیارہ ہو سکتا ہے، اگر کسی ستارے کے پلک جھپکتے میں کوئی نمونہ ہو، تو معلوم ہوتا ہے کہ کوئی چیز اس کے گرد گھومتا ہے۔”

کیپلر کو کچھ سیارے تلاش کرنے کی امید تھی، لیکن اپنے نو سال کے عرصے میں، اس نے ہمارے نظام شمسی سے باہر 2,600 سیارے تلاش کیے ۔ 2013ء میں سائنسدانوں نے اندازہ لگایا تھا کہ اس کے مطابق ہماری کہکشاں میں ایسے اربوں سیارے ہو سکتے ہیں۔ لیکن ان میں سے کتنے میں زندگی کی صلاحیت ہو سکتی ہے؟

DeWitt کہتے ہیں، “یہ ایک موٹا تخمینہ ہے کیونکہ ہم نہیں جانتے کہ زندگی کن حالات میں پروان چڑھتی ہے۔ ہمارے سامنے صرف زمین کی مثال موجود ہے۔ لیکن ہم یہ فرض کر سکتے ہیں کہ اگر کوئی سیارہ ہے تووہاں زندگی کا امکان ہو سکتا ہے، اس حساب سے یہ کہا جا سکتا ہے کہ ہماری کہکشاں میں ایسے کم از کم 30 کروڑ سیارے ہو سکتے ہیں ۔

ہم جانتے ہیں کہ اب تک ہمیں دوسرے سیاروں پر زندگی کے بارے میں کوئی ٹھوس ثبوت نہیں ملا۔ کئی دہائیوں کی تلاش کے بعد بھی اس معاملے میں ہم وہیں ہیں جہاں سے ہم نے شروعات کی تھی۔

لیکن اسے ایک مختلف نقطہ نظر سے بھی دیکھا جا سکتا ہے۔ یہ احتمال کا سوال ہے۔ کائنات میں لاکھوں کہکشائیں ہیں، جن میں سے ایک ہماری زمین ہے، اور ہماری کہکشاں میں بھی اربوں سیارے ہیں ۔

یہ ممکن ہے کہ زمین واحد سیارہ نہ ہو جہاں زندگی پروان چڑھی ہو۔ ہو سکتا ہے کہ کسی اور سیارے پر بھی زندگی ہو اور وہ ہمارے جیسی بھی ہو۔

ہو سکتا ہے کسی دن ہم اجنبیوں کو تلاش کر لیں یا ہو سکتا ہے کہ وہ ہمیں پہلے تلاش کر لیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں