کھڑے ہو کر پانی پینے سے جسم پر کیا اثرات مرتب ہوتے ہیں؟

لاہور: (ویب ڈیسک) پانی ہماری زندگی کے لیے بہت ضروری ہے لیکن غلط طریقے سے پانی پینا بھی نقصان کا باعث بنتا ہے۔ آئیے جانتے ہیں کہ پانی پیتے وقت کن چیزوں کا خیال رکھنا چاہیے۔

کھانے کے درمیان پانی پینا

ہاضمہ درست رکھنے کے لیے کھانے کے درمیان پانی کبھی نہیں پینا چاہیے۔ ایسا کرنا بھی موٹاپے کا باعث بنتا ہے۔ آیوروید کے مطابق کھانا پیٹ میں گرمی پیدا کرتا ہے اور پانی کی خوبی ٹھنڈک ہے۔ ایسی حالت میں کھانے کے درمیان پانی پینا گرمی کو ختم کرتا ہے جو بیماریوں کا باعث بنتا ہے۔

ایک سانس میں پانی نگلنا

ایک وقت میں ایک گلاس پانی پینا غلط ہے۔ پانی ہمیشہ گھونٹ گھونٹ پینا چاہیے۔

گرم پانی

گرم پانی پینے سے کھانا جلدی ہضم ہو جاتا ہے۔ اس لیے کھانا کھانے کے آدھے گھنٹے بعد پانی گھونٹ گھونٹ پی لیں۔

کھانے سے پہلے اور بعد میں پانی نہ پییں

کھانا کھانے سے پہلے اور کھانے کے فوراً بعد کبھی بھی پانی نہ پیں۔ کھانے سے پہلے اور بعد میں پانی پینے کے لیے ہمیشہ کم از کم 30 منٹ کا وقفہ رکھیں۔ تاکہ پانی گیسٹرک جوس کو پتلا نہ کرے اور کھانے کے ہاضمے میں رکاوٹ نہ ڈالے۔ ایک یا دو گھونٹ پانی صرف اس صورت میں پئیں جب بالکل ضروری ہو۔

کھڑے ہو کر پانی نہ پئیں

جسم کے تمام حصوں کو پانی کی ضرورت ہوتی ہے تاکہ یہ وہاں کی گندگی یا زہریلے مادوں کو دور کر سکے۔ لیکن جب ہم کھڑے ہوکر پانی پیتے ہیں تو یہ تیزی سے گزرتا ہے اور براہ راست بڑی آنت میں پہنچ جاتا ہے۔ جس کی وجہ سے جسم کی اندرونی صفائی نہیں ہو پاتی اور بیماریاں جنم لیتی ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں