مسلمانوں کو ختم کرنا آسان نہیں، ہم لڑنے کیلئے تیار ہیں: نصیر الدین شاہ

ممبئی: (ویب ڈیسک) بالی ووڈ کے معروف اداکار نصیر الدین شاہ نے کہا ہے کہ مسلمانوں کی نسل کشی کا مطالبہ کرنے والے خانہ جنگی شروع کرنا چاہتے ہیں۔ ہم مسلمان ڈریں گے نہیں بلکہ اپنی بقا کیلئے لڑیں گے۔

کولکتہ سے شائع ہونے والے انگریزی روزنامہ دی ٹیلی گراف نے نصیر الدین شاہ کے اس تبصرے کو نمایاں جگہ دی ہے۔ معروف صحافی کرن تھاپر نے دی وائر کے لئے نصیر الدین شاہ کا انٹرویو کیا تھا، اس میں نصیر الدین شاہ نے ہریدوار میں ہندوئوں کے اجتماع کے بارے میں تفصیل سے بات کی ہے۔

ہریدوار میں 17 سے 19 دسمبر تک منعقد ہونے والی مذہبی پارلیمنٹ میں مسلمانوں کی نسل کشی کی اپیل کے سوال پر نصیر الدین شاہ نے کہا، ’’اگر وہ جانتے ہیں کہ وہ کیا بات کر رہے ہیں، تو میں حیران ہوں۔ یہ خانہ جنگی کی اپیلیں ہیں۔ ہم مسلمان اتنی آسانی سے فنا ہونے والے نہیں ہیں۔ ہم ان لوگوں سے لڑیں گے۔

نصیر الدین شاہ کا کہنا تھا کہ بھارت ہمارے 20 کروڑ لوگوں کے لیے مادر وطن ہے۔ ہم یہاں پیدا ہوئے ہیں۔ ہمارے خاندان اور کئی نسلیں یہیں رہیں اور اسی مٹی میں گھل مل گئیں۔ مجھے یقین ہے کہ اگر ایسی مہم شروع ہوئی تو سخت مزاحمت ہوگی۔

ان کا کہنا تھا کہ بھارت میں مسلمانوں کو دوسرے درجے کا شہری بنایا جا رہا ہے۔ یہ مسلمانوں میں خوف پیدا کرنے کی کوشش ہے لیکن ہم مسلمان ہار نہیں مانیں گے۔ مسلمانوں کو اس کا سامنا کرنا پڑے گا کیونکہ ہمیں اپنا گھر بچانا ہے۔ ہمیں اپنی مادر وطن کو بچانا ہے۔ ہمیں اپنے خاندان کو بچانا ہے۔ ہمیں اپنے بچوں کو بچانا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اوپر سے مسلمانوں کو پسماندہ کرنے کی کوششیں کی جا رہی ہیں۔ “یہ مسلمانوں کو غیر محفوظ محسوس کر انے کی ایک منظم کوشش ہے۔ حکمران جماعت کے لیے انتہا پسندی ایک پالیسی بن چکی ہے۔ میں یہ جاننے کے لیے متجسس تھا کہ مسلمانوں کے خلاف تشدد پر اکسانے والوں کا کیا بنے گا۔ لیکن یہ سچ ہے کہ ایسا کچھ نہیں ہوا۔ تاہم، یہ حیران کن نہیں ہے کیونکہ اس کے ساتھ کچھ نہیں ہوا جس کے بیٹے نے کسانوں کو کچل دیا تھا۔

بالی ووڈ اداکار نے کہا کہ انہیں حکومت کی طرف سے کوئی تعجب نہیں ہے۔ “یہ یقینی طور پر مکمل طور پر حیران کن نہیں ہے،” یہ مایوس کن ہے لیکن یہ کم و بیش وہی ہے جس کی ہم توقع کر رہے تھے۔ لیکن جس طرح سے حالات چل رہے ہیں وہ میرے اندیشوں سے بھی بدتر ہیں۔ ہمارا لیڈر ایسی اشتعال انگیزیوں پر خاموشی اختیار کرتا ہے۔

خیال رہے کہ اس ہفتے کے شروع میں، سپریم کورٹ کے کئی وکلاء نے چیف جسٹس آف انڈیا کو خط لکھ کر ہریدوار میں منعقدہ دھرم سنسد کا ازخود نوٹس لینے کی اپیل کی تھی۔

وکلاء نے کہا تھا کہ ان پروگراموں کی ویڈیوز پبلک ہیں اور ان میں نفرت پھیلانے والوں کے خلاف سخت کارروائی کی جانی چاہیے۔ اس خط پر کل 76 افراد نے دستخط کیے ہیں۔

خط میں کہا گیا ہے کہ یہ صرف تقریر کا معاملہ نہیں بلکہ ایک برادری کے لوگوں کو مارنے کی کھلی اپیل کی گئی ہے۔ اس سے ناصرف ملک کی یکجہتی اور سالمیت کو خطرہ ہے بلکہ لاکھوں مسلمانوں کی جانیں بھی خطرے میں ہیں۔

اس خط میں وکلاء نے کہا ہے کہ نفرت پھیلانے والوں کے خلاف کوئی زبردستی کارروائی نہیں کی گئی۔ اس لیے اب فوری عدالتی مداخلت کی ضرورت ہے۔ اس خط پر دستخط کرنے والوں میں دشینت ڈیو، پرشانت بھوشن، سلمان خورشید، راجو رام چندرن، پی وی سریندرناتھ، شالینی گیرا اور نینتارا رائے شامل ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں