سائنسدانوں نے خلائی مخلوق سے بات کرنے کا منصوبہ بنا لیا

کیلیفورنیا: (ویب ڈیسک) سائنسدان اور امریکی خلائی ایجنسی طویل عرصے سے بیرونی دنیا میں ایلینز کی موجودگی کو سمجھنے کیلئے کئی سوالوں کے جوابات تلاش کر رہے ہیں۔ اس سلسلے میں اب سائنسدان جس مشن میں مصروف ہیں وہ کافی چونکا دینے والا ہے۔

خلا میں دلچسپی رکھنے والے ہر فرد کے ذہن میں ہمیشہ یہ سوال رہتا ہے کہ کیا زمین کے علاوہ کہیں اور بھی زندگی موجود ہے؟ کئی خلائی مشنوں کے باوجود ہمارے سائنسدان ابھی تک زمین کے باہر زندگی کے آثار تلاش کرنے میں کامیاب نہیں ہو سکے۔

آپ نے امریکہ اور مغربی ممالک میں یو ایف او اور ایلینز پر تحقیق کی خبریں بھی پڑھی ہوں گی۔ حالانکہ ان کے بارے میں اصل حقیقت ہر کوئی نہیں جانتا۔ ناسا کے سائنسدانوں نے ایلینز اور ان کی موجودگی کے بارے میں کچھ سوالات کے جوابات دینے کی کوشش کی ہے۔ دراصل سائنسدانوں نے ایک منصوبہ بنایا ہے کہ وہ ایلین کو ان کی زبان میں پیغامات بھیجیں گے۔

اس منصوبے پر ناسا کے سائنسدان اکٹھے ہوئے ہیں۔ کیلیفورنیا میں ناسا کی جیٹ پروپلشن لیبارٹری میں ڈاکٹر جوناتھن کی سربراہی میں سائنسدان اس مشن پر کام کر رہے ہیں۔

‘دی گارڈین’ میں شائع رپورٹ کے مطابق ناسا کے سائنسدان ایک خصوصی بائنری پیغام منتقل کرنے کی تیاری کر رہے ہیں۔ یہ ایک قسم کا ریڈیو سگنل ہوگا، جس کے ذریعے اسے ایلینز سے بات چیت کرنے کی کوشش کی جائے گی۔ اسے صرف خلائی مخلوق کی زبان میں ڈی کوڈ کیا جائے گا۔

اس رپورٹ کے مطابق ناسا کے سائنسدان زمین کی لوکیشن اور کچھ ڈی این اے کے نمونے ایلین کو بھیجنا چاہتے ہیں۔ یہ پیغامات ریڈیو سگنلز کے ذریعے بھیجے جائیں گے۔

تاہم کچھ ماہرین کی جانب سے رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ یہ منصوبہ اس عمل کا حصہ ہے جس میں یہ دعویٰ کیا گیا تھا کہ ایلینز کی دنیا سے زمین پر کچھ پیغامات بھیجے گئے تھے۔

کہا جا رہا ہے کہ ایلین کا پیغام دو سال قبل زمین پر آیا تھا۔ اس وقت زمین پر موجود ریڈیو دوربین نے ریڈیو شعاعوں کی تیز لہر کو ریکارڈ کیا تھا۔ حالانکہ یہ لہر چند ملی سیکنڈ کی تھی جو اچانک غائب ہو گئی۔ لیکن ان ریڈیو شعاعوں کے بارے میں جاننا ایک اہم دریافت سمجھا جاتا تھا۔

پہلی بار، فاسٹ ریڈیو برسٹ کا زمین کے اتنے قریب سے پتہ چلا۔ بتایا گیا کہ یہ پیغامات صرف ایلینز سے موصول ہوئے ہیں۔ بعد ازاں ان سگنلز میں آنے والے پیغامات کو سمجھنے کی کوشش کی گئی۔ اب اس لنک میں پیغامات واپس بھیجے جائیں گے۔ فی الحال یہ دیکھنا دلچسپ ہوگا کہ سائنسدان اس نئے تجربے میں کس حد تک کامیابی حاصل کرنے میں کامیاب ہوں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں