کیا ایٹمی توانائی گیس اور تیل کی ضرورت ختم کر دے گی؟

لندن: (ویب ڈیسک) ایندھن کے استعمال کے معاملے میں دنیا ایک دوراہے پر کھڑی ہے۔ موسمیاتی تبدیلی کے اس دور میں فوسل فیول کا استعمال مشکل ہوتا جا رہا ہے۔ زمین گرم ہو رہی ہے اور دنیا کاربن کے اخراج کو کم کرنے کا ہدف حاصل کرنے میں کامیاب ہوتی دکھائی نہیں دے رہی۔

توانائی کے اس بحران کو روس یوکرین جنگ نے مزید بے نقاب کیا۔ یہ بھی عیاں ہو گیا ہے کہ یورپ کس حد تک روسی گیس پر انحصار کر رہا ہے۔ شاید اسی لئے فرانسیسی صدر ایمانوئل میکرون نے کہا کہ جوہری نشاۃ ثانیہ کا وقت آگیا ہے۔

میکرون نے پانچ سال قبل جوہری توانائی کی پیداوار میں ایک تہائی کمی کا اعلان کیا تھا۔ فوکوشیما حادثے کے پیش نظر فرانس کے ساتھ ساتھ دیگر کئی ممالک نے بھی ایسا ہی ارادہ ظاہر کیا تھا لیکن ان دنوں دنیا میں ایٹمی توانائی کے حوالے سے رویہ بدلتا ہوا دکھائی دے رہا ہے۔ خاص طور پر گیس کی قیمتوں میں اضافے کی وجہ سے۔ روس یوکرین جنگ کے نتیجے میں پیدا ہونے والے توانائی کے مسئلے نے اس سمت میں بھی سوچنے پر مجبور کر دیا ہے۔

نیوکلیئر سائنس اور ٹیکنالوجی کے ماہر الفرڈو گارسیا کا کہنا ہے کہ یہ بدقسمتی کی بات ہے کہ ہم جنگ سے سیکھ رہے ہیں کہ اب ہم فوسل فیول پر زیادہ انحصار نہیں کر سکتے۔ جیواشم ایندھن دنیا کی بجلی اور گرین ہاؤس گیسوں کے اخراج کا دو تہائی حصہ پیدا کرتے ہیں۔ لیکن 2018ء میں جیواشم ایندھن سے فضائی آلودگی نے 80 لاکھ افراد کی جان لے لی۔ یہ اعداد و شمار ہارورڈ یونیورسٹی کی ایک تحقیق کے ہیں۔

جس رفتار سے توانائی پیدا ہو رہی ہے اس سال اخراج میں 14 فیصد اضافہ ہو گا۔ اس سے اس صدی تک درجہ حرارت میں ایک اعشاریہ پانچ ڈگری سینٹی گریڈ اضافے کا ہدف حاصل ہو جائے گا۔ اس لیے ہر کوئی بجلی پیدا کرنے کے ایسے ماڈل کو اپنانے پر متفق نظر آتا ہے، جس کا انحصار فوسل فیول پر ہو۔ اب دو ہی راستے ہیں۔ جوہری اور قابل تجدید کا مطلب قابل تجدید توانائی ہے۔

گرین پیس سپین میں توانائی اور موسمیاتی تبدیلی کے سربراہ ماریٹیکسل بیناسار کہتے ہیں کہ 100 فیصد قابل تجدید اور موثر توانائی کا ماڈل اپنانا تکنیکی طور پر ممکن ہے۔ یہ سستا بھی ہو سکتا ہے اور ماحول دوست بھی۔ تاہم ایٹمی بجلی کے حامی اس سوال پر بھی پریشان ہیں کہ کیا یہ توانائی کے روایتی ذرائع کا متبادل بن سکے گی۔

درحقیقت قابل تجدید ذرائع سے بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت محدود ہے، اس کے علاوہ اس کے لیے بہت زیادہ جگہ اور مواد کی ضرورت ہوتی ہے۔ ساتھ ہی، گرڈ تک توانائی پہنچانے کے لیے موسم پر انحصار کرنا پڑتا ہے۔ اس لیے متبادل توانائی کے ذرائع کے حامیوں کے مطابق سب سے عملی اقدام یہ ہوگا کہ جوہری اور قابل تجدید توانائی کی پیداوار میں اضافہ کیا جائے تاکہ توانائی کے لیے کوئلے، گیس اور تیل پر انحصار مکمل طور پر ختم ہو جائے۔ لیکن یہ راتوں رات نہیں ہو گا۔ کیونکہ ایٹمی بجلی گھر بنانے اور شروع کرنے میں پانچ سے دس سال لگتے ہیں۔

ایٹمی توانائی کیسے پیدا ہوتی ہے؟

نیوکلیئر پاور پلانٹ میں بجلی پیدا کرنے کے لیے نیوکلیئر فیشن کا استعمال کیا جاتا ہے۔ ایک بھاری ایٹم کو تقسیم کرنے سے (عام طور پر یہ یورینیم-235 ہوتا ہے) ضرب اثر میں مزید نیوٹران بنتے ہیں۔ یہ ایک سیکنڈ کے بہت چھوٹے حصے میں ایک سلسلہ رد عمل کو متحرک کرتا ہے۔ اس سے نیوٹران، گاما شعاعیں اور بڑی مقدار میں توانائی پیدا ہوتی ہے۔ یہ گاڑھا پانی کا درجہ حرارت بڑھاتا ہے اور بھاپ پیدا کرتا ہے۔ بھاپ پھر ری ایکٹر کی ٹربائن کو گھماتی ہے، جو بجلی پیدا کرنے والے جنریٹر کو چالو کرتی ہے۔ اس طرح بجلی تیار ہوتی ہے اور آخر کار گرڈ میں جاتی ہے۔

فیوژن کے ساتھ کیا ہوتا ہے ؟

فیوژن سے مراد بڑی مقدار میں توانائی کا اخراج ہے۔ درحقیقت یہ عمل ایٹمی مراکز کو توڑنے کے بجائے انہیں ایک جگہ باندھ کر کیا جاتا ہے۔ جوہری توانائی کو مستقبل کی توانائی کے طور پر دیکھا جاتا ہے کیونکہ یہ نہ ہونے کے برابر آلودگی کا باعث بنتی ہے۔ یہ وسائل بھی کم خرچ کرتا ہے۔ اس سے لامحدود توانائی حاصل کی جا سکتی ہے۔ لیکن اس زمین پر ایٹمی توانائی کی کامیاب پیداوار کے لیے بہت اعلیٰ ٹیکنالوجی کی ضرورت ہے اور یہ اب بھی ترقی کر رہی ہے۔ ماہرین کا خیال ہے کہ جوہری فیوژن اس صدی کے دوسرے نصف میں سب سے زیادہ توجہ حاصل کرنے والا مسئلہ بن جائے گا۔

یہ کتنا ماحول دوست ہے؟

یورپی کمیشن کی تکنیکی رپورٹ کے مطابق یورپی کمیشن نے جوہری توانائی کو ‘سبز توانائی’ کے طور پر درجہ بندی کیا ہے۔ نیوکلیئر پاور پلانٹس ہر گھنٹے میں ایک گیگا واٹ بجلی پیدا کرنے کے لیے اوسطاً 28 ٹن کاربن ڈائی آکسائیڈ خارج کرتے ہیں، جب کہ کوئلے سے 888 ٹن کاربن ڈائی آکسائیڈ تیل سے پیدا ہوتی ہے، یعنی 735 ٹن۔

شمسی توانائی کی پیداوار کے دوران، جوہری توانائی کی پیداوار کے عمل کے مقابلے میں تین گنا زیادہ کاربن ڈائی آکسائیڈ پیدا ہوتی ہے۔ یعنی 85 ٹن گرین ہاؤس گیس۔ ہائیڈرو الیکٹرک اور ہوا سے بجلی 26 ٹن کاربن ڈائی آکسائیڈ پیدا کرتی ہے۔ یہ سب سے صاف توانائی ہے۔

نیوکلیئر پاور بہت کم سلفر ڈائی آکسائیڈ اور نائٹروجن ڈائی آکسائیڈ پیدا کرتی ہے۔ اس سے تیزاب کی بارش ہوتی ہے۔ اس کے علاوہ یہ کیمیکل فضلہ بھی کم پیدا کرتا ہے۔ یہ دیگر توانائی کی پیداوار کے مقابلے میں کم معدنی اور جیواشم ایندھن کے وسائل استعمال کرتا ہے۔ گارشیا کا کہنا ہے کہ جوہری توانائی ماحول دوست اور محفوظ ہے۔ لیکن ہر کوئی اس سے متفق نہیں ہے۔

“اگرچہ جوہری توانائی اتنی زیادہ گرین ہاؤس گیس نہیں خارج کرتی ہے، لیکن یہ فی کلو واٹ زیادہ کاربن ڈائی آکسائیڈ پیدا کرتی ہے،” بناسارا کہتے ہیں۔ چونکہ ایٹمی ری ایکٹر بجلی پیدا کرتا ہے، اس لیے یہ گرین ہاؤس گیسیں خارج کرتا ہے۔ ,

جوہری توانائی کے ناقدین کا کہنا ہے کہ یورینیم نکالنے کی وجہ سے ماحولیات کو نقصان پہنچتا ہے۔ پلانٹ کو بند کرنا مہنگا اور آلودگی پھیلانے والا ہے۔ تاہم ایٹمی پلانٹس میں حادثات اور فوجی حملوں کا خطرہ بہت کم ہے۔ لیکن اگر ایسا ہوتا ہے تو یہ خوفناک ثابت ہو سکتا ہے۔

جوہری ایندھن سے پیدا ہونے والے جوہری فضلے کو ٹھکانے لگانا بہت پیچیدہ کام ہے۔ مثال کے طور پر، جوہری توانائی کی پیداوار کے دوران، اعلی درجے کے جوہری فضلہ کو تین مختلف مراحل میں ذخیرہ کیا جاتا ہے۔ آخری سٹیج کا فضلہ زمین کے اندر 200 سے 1000 میٹر تک دب جاتا ہے۔

گرین پریس کے کارکنوں کا کہنا ہے کہ جوہری صنعت اس مسئلے کا کوئی تسلی بخش محفوظ تکنیکی حل تلاش کرنے میں کامیاب نہیں ہو سکی ہے۔

کیا یہ مالی طور پر فائدہ مند ہے؟

نیوکلیئر پاور پلانٹ بنانا اور شروع کرنا بہت مہنگا ہے۔ مثال کے طور پر برطانیہ کے جنوبی حصے ہنکلے پوائنٹ میں ایک جوہری پاور پلانٹ بنایا جا رہا ہے۔ اس سے 3200 میگاواٹ بجلی پیدا ہوگی اور یہ 2025 تک ملک کی توانائی کی ضروریات کا 7 فیصد پورا کرے گی۔ اس ایک اندازے کے مطابق 30 ہزار ملین ڈالر خرچ ہوں گے۔

ارجنٹائن میں اتوچا نیوکلیئر پاور پلانٹ 1200 میگاواٹ بجلی پیدا کرے گا لیکن اس پر 8000 ملین ڈالر لاگت آئے گی۔ تاہم نیوکلیئر سے بجلی پیدا کرنا سستا ہے کیونکہ اس کے لیے بڑی مقدار میں ایندھن کی مسلسل فراہمی کی ضرورت نہیں ہے۔ اگرچہ یورینیم کافی مہنگا ہے لیکن اس کی تھوڑی مقدار بھی بہت زیادہ توانائی پیدا کر سکتی ہے۔

ایٹمی طاقت بننے میں آگے کون ہے؟

امریکہ کے پاس 90 گیگا واٹ سے زیادہ کی صلاحیت کے 96 ری ایکٹر ہیں جو کام کر رہے ہیں۔ امریکہ دنیا کی جوہری توانائی کی پیداوار کا ایک تہائی حصہ رکھتا ہے۔ اس کے بعد چین اور فرانس کا نمبر آتا ہے۔ انٹرنیشنل اٹامک انرجی ایجنسی کے اعداد و شمار کے مطابق دونوں کا حصہ 13-13 فیصد ہے۔ جوہری پاور پلانٹس فرانس میں بجلی کی پیداوار میں 70 فیصد حصہ ڈالتے ہیں۔ اس لحاظ سے یہ دنیا میں پہلے نمبر پر ہے۔

ایمینوئل میکرون نے توانائی کے منصوبے کا اعلان کیا ہے جس میں 50 ہزار ملین یورو کی لاگت سے چھ نئے ری ایکٹر بنائے جائیں گے۔ جرمنی نے اپنے تین جوہری پلانٹس کو بند کرنے کا فیصلہ کیا لیکن یوکرین اور روس کے درمیان جنگ کی وجہ سے وہ الجھن کا شکار ہے۔

یورپ ایٹمی توانائی کے معاملے پر منقسم ہے۔ جرمنی، آسٹریا، ڈنمارک، اسپین، لکسمبرگ اور پرتگال اسے فروغ دینے کے خلاف ہیں۔ یہ ممالک بلغاریہ، کروشیا، فن لینڈ، فرانس، رومانیہ اور سلووینیا کے خود ساختہ ایٹمی اتحاد کے خلاف ہیں۔ لاطینی امریکہ میں جوہری توانائی صرف 2.2 فیصد بجلی پیدا کرتی ہے۔ ارجنٹائن میں تین ری ایکٹر ہیں اور میکسیکو-برازیل کے پاس صرف دو ری ایکٹر ہیں۔

لیکن چین جوہری توانائی پر سب سے زیادہ پیسہ لگا رہا ہے جو ایٹمی توانائی کے معاملے میں دنیا کی اگلی سپر پاور بننے کی دوڑ میں ہے۔ 2016ء اور 2020ء کے درمیان چین نے اپنی جوہری توانائی کی پیداوار کو دوگنا کر کے 47 گیگا واٹ کر دیا۔ یہ 2035 تک 180 گیگاواٹ تک پہنچنے کا ارادہ رکھتا ہے۔ یہ امریکہ کی موجودہ ایٹمی بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت سے دوگنا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں