پوتن کی ‘گرل فرینڈ’ علینا کبائیوا کون ہے؟

یوکرین پر حملے کی وجہ سے روس پر پہلے ہی کئی غیر متوقع پابندیاں عائد کی جا چکی ہیں۔ اور اب یورپی یونین روسی صدر ولادیمیر پوتن کی “گرل فرینڈ” علینا کبائیوا کو بھی نشانہ بنا سکتی ہے۔

وہ یورپی یونین کی جانب سے پابندیوں کے لیے منظور کردہ تازہ ترین فہرست میں بھی شامل ہیں۔ غیر ملکی میڈیا کے مطابق کریملن کے موقف کو فروغ دینے اور صدر پوتن کے ساتھ “قریبی تعلق” رکھنے پر علینا کبائیوا کو نشانہ بنایا جائے گا۔

میڈیا اداروں کی سربراہ بننے سے پہلے، علینا کبائیوا دنیا کی ایک معروف جمناسٹ رہ چکی ہیں۔ 2000 کے سڈنی اولمپک گیمز میں طلائی تمغہ جیتنے والی کبائیوا دنیا کے کئی بڑے ٹورنامنٹس میں بھی کئی تمغے جیت چکی ہیں۔

یورپی یونین سمیت کئی ممالک اور ادارے پہلے ہی ولادیمیر پوتن کے قریبی ساتھیوں کو سزا دینے کے لیے متعدد پابندیاں عائد کر چکے ہیں۔ کہا جاتا ہے کہ پوتن کی قربت کی وجہ سے کئی اولیگارچ، سیاست دانوں اور عہدیداروں کو فائدہ پہنچا۔

امریکہ اور برطانیہ نے گذشتہ ماہ صدر پوتن کی بیٹی 36 سالہ ماریہ وورونسووا اور 35 سالہ کیٹرینا تیخونووا پر پابندیاں عائد کی تھیں۔ وہ دونوں پوتن کی سابقہ بیوی لیوڈمیلا کے ہاں پیدا ہوئی تھیں۔

صدر پوتن نے ہمیشہ اس تعلق کو چھپایا ہے۔ جب بھی ان سے ان کی ذاتی زندگی کے بارے میں پوچھا گیا تو انہوں نے اسے ٹال دیا۔ تاہم، اس نے کبائیوا کے ساتھ اپنے تعلقات سے کبھی انکار نہیں کیا۔

چند ہفتے قبل وال سٹریٹ جرنل نے خبر دی تھی کہ امریکہ پوتن کی مبینہ “گرل فرینڈ” اور سابق اولمپک جمناسٹ علینا کبائیوا پر پابندی لگانے کی تیاری کر رہا ہے، لیکن آخری لمحات میں ایسا نہیں کیا گیا۔ اس کے پیچھے وجہ یہ بتائی گئی کہ پوتن اسے ذاتی حملہ سمجھ سکتے ہیں اور یہ امن کی بحالی کی کوششوں کو بھڑکا سکتا ہے۔

تاہم، وائٹ ہاؤس کی پریس سیکرٹری جین ساکی نے پہلے ان دعوؤں کو مسترد کر دیا ہے کہ امریکہ نے جان بوجھ کر روسی صدر پوتن کی مبینہ گرل فرینڈ پر پابندی نہیں لگائی تھی۔

یہ پوچھے جانے پر کہ روس کی سابق رہنما اور جمناسٹ الینا کبائیوا پر کیوں کارروائی نہیں کی گئی، ساکی نے کہا کہ ہم پابندیوں کا مسلسل جائزہ لے رہے ہیں۔

علینا کبائیوا کون ہے؟

الینا کبائیوا، جنہیں روس کی ‘خفیہ خاتون اول’ کہا جاتا ہے، کا ماننا ہے کہ “ہر خاندان میں جنگ کی ایک کہانی ہوتی ہے اور ہمیں ان کہانیوں کو نہیں بھولنا چاہیے بلکہ اپنی آنے والی نسلوں کو سنانا چاہیے۔”

وہ ایک جمناسٹ رہ چکی ہیں اور 2004 کے ایتھنز اولمپکس میں گولڈ میڈل بھی جیت چکی ہیں۔ اس نے اپنا آغاز 13 سال کی عمر میں کیا اور 1998 میں اپنا پہلا عالمی اعزاز جیتا۔

اس کے بعد انہوں نے 2001 اور 2002 میں یورپی چیمپئن شپ میں بھی کئی تمغے حاصل کیے۔ 2003 میں بھی انہوں نے کئی عالمی ٹائٹل اپنے نام کیے۔ وہ ڈوپنگ کیس میں بھی ملوث ہیں۔ تاہم انہیں اس کا بڑا نقصان نہیں اٹھانا پڑا۔

سال 2005 کے بعد وہ آہستہ آہستہ سیاست میں آئیں اور ان کا نام پوتن کے ساتھ جوڑا جانے لگا۔ وہ یونائیٹڈ رشیا پارٹی کی نمائندگی کرتے ہوئے روسی پارلیمنٹ کے ایوان زیریں ڈوما کے لیے بھی منتخب ہوئی ہیں۔ 2014 میں، وہ سوچی اولمپکس میں مشعل اٹھانے والی کھلاڑیوں میں سے ایک تھیں۔

علینا کبائیوا کریملن کے حمایت یافتہ میڈیا گروپ ‘دی نیشنل میڈیا گروپ’ کی سربراہ بھی ہیں، لیکن مغربی پابندیوں کے پیش نظر اپریل میں ان کا نام ویب سائٹ سے ہٹا دیا گیا تھا۔

ماسکو ٹائمز نے یہ بھی اطلاع دی ہے کہ سوئٹزرلینڈ، امریکہ اور یورپ کے حکام نے وال سٹریٹ جرنل کو بتایا کہ 2015 میں علینا بچے کو جنم دینے سوئٹزرلینڈ گئی تھیں۔ اس کے بعد، 2019 میں، اس نے مبینہ طور پر ماسکو میں جڑواں بچوں کو جنم دیا۔ تاہم پوتن نے کبھی اس کی تصدیق نہیں کی۔

ان مشکلات کے بارے میں بات کریں جو ہمیں کسی کے ساتھ شیئر کرنے کی اجازت نہیں ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں