جلد سے جلد الیکشن کا اعلان، اسمبلیاں تحلیل کرو،عمران خان

پاکستان تحریک انصاف ( پی ٹی آئی ) کے چیئرمین اور سابق وزیر اعظم عمران خان نے ملتان میں جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اتوار کو پشاور میں پارٹی کور کمیٹی کا اجلاس بلایا ہے، 25مئی اور 29مئی کے درمیان لانگ مارچ کا فیصلہ ہوگا.

سابق وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ دنیا میں کبھی بھی کوئی انقلاب اس وقت تک کامیاب نہیں ہوتا جب اس کے نوجوان اور خواتین باہر نہیں نکلتے ، میں ہمیشہ اللّٰہ سے دعا کرتا تھا کہ اے اللّٰہ تو اس قوم کو جگا دے ، وہ کبھی کسی سپر پاور یا پھر کسی مافیا کے سامنے سر نہ جھکائیں تو اللّٰہ نے میری دعا سن لی۔

عمران خان نے کہا کہ قرآن کی ایک آیت ہے جو لوگ ایمان لے آئیں اللّٰہ ان کا خوف ختم کردیتا ہے، میں آپ کو بتا دوں کہ کوئی بھی خوف بڑے انسان کو چھوٹا انسان بنادیتا ہے، جب تک آپ خوف کو توڑیں گے نہیں تو عظیم قوم نہیں بن سکتے۔

پی ٹی آئی چیئرمین نے کہا کہ مدینے کی ریاست میں نبی اکرمﷺ نے لوگوں کو آزاد کردیا، خوف سے آزاد کردیا، میں بتادوں آج تک کوئی بڑا کاروباری انسان نہیں بنا جو نقصان سے ڈرتا ہو، کوئی بڑا فوجی نہیں بنا جو موت سے خوف کھاتا ہو۔

عمران خان نے کہا کہ دنیا میں سب سے بڑے پہاڑ پر جو انسان چڑھا تو اس نے بھی اپنے خوف پر قابو پایا تھا ، کرپٹ حکمرانوں نے ہمیں امریکا کا خوف دلایا ہوا ہے ، جب تک ہم اس کے جوتے پالش نہیں کریں گے تو سکون سے نہیں رہ سکتے۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ تیس سال تک حکومت کرنے والوں نے سازش کی کہ کسی طرح اس منتخب حکومت کو ختم کردیں ، ان کا مقصد صرف این آر او لینا اور کرپشن کے کیسز معاف کروانا تھا۔

پی ٹی آئی چیئرمین نے کہا کہ جنرل مشرف نے باریاں لینے والوں کے سارے کرپشن کے کیسز معاف کردیے ، جس کی وجہ سے ملک کا قرضہ اوپر گیا ، انہوں نے مجھے پوری طرح بلیک میل کرنے کی کوشش کی کہ میں کسی طرح ان کے کیسز معاف کر دوں۔

عمران خان نے کہا کہ اگر میں ان کے کرپشن کے کیسز معاف کرتا تو اس کا مطلب یہ ہوا کہ میں اقتدار میں انصاف کے لیے نہیں آیا تھا بلکہ اپنی کرسی بچانے کے لیے آیا تھا۔

انہوں نے کہا کہ ن لیگ والو مجھے ایک بات کا جواب دے دو کہ کبھی بھی کوئی انسانی معاشرہ گیدڑ کو بھی لیڈر مانتا ہے، خدا کے واسطے جواب دو کبھی کوئی گیدڑ لیڈر بن سکتا ہے؟۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ مشرف نے جب نواز شریف کو جیل میں ڈالا تو وہاں پر اس کے ٹشو پیپر ختم ہوگئے تھے رو رو کر روز کہتا تھا مجھے باہر بھیج دو ، اس کے بعد مشرف نے اسے باہر بھیج دیا، جب ہم نے جیل میں ڈالا تو انہوں نے ڈرامے شروع کردیے بیماری کے بہانے کرنے لگا ، ہماری کابینہ کی وزیر شیریں مزاری میٹنگ میں رونے لگی کہ بے چارے کو باہر بھیج دو۔

عمران خان نے کہا کہ نواز شریف جیسے ہی جہاز میں چڑھے تو فوراً طاقتور ہوگئے ، لندن کی ہوا کھانے کے بعد لیڈر بن گئے ، میں پوچھتا ہوں جس پر کرپشن کے کیسز ہوں اور اس کے بچے یہ کہتے ہوں کہ ہم جواب دہ اس لیے نہیں ہیں کہ ہم ملک سے باہر رہتے ہیں تو ہم پر اس ملک کا قانون لاگو نہیں ہوتا ، میں پوچھتا ہوں ن لیگ والوں آپ کیسے ان کے پیچھے چلتے ہو۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ نواز شریف کا چھوٹا بھائی عدالت میں گیا اور کہا کہ میں گارنٹی دیتا ہوں کہ میرا بھائی واپس آجائے گا ، اس کے بعد جب نواز شریف چلا گیا تو وہاں جاکر اس نے سازشیں شروع کردیں، ان کے ساتھ آصف علی زرداری اور مولانا فضل الرحمان بھی مل گئے۔

عمران خان نے کہا کہ یہ لوگ پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتیں بڑھانے کے لیے ڈرے ہوئے ہیں، اور کہتے ہیں نیشنل سیکیورٹی کی میٹنگ بلاؤ، امریکا نے ہمارے خلاف سازش کی ہے۔

پی ٹی آئی چیئر مین نے کہا کہ جنوبی پنجاب سے جتنے بھی لوٹے نکلے ہیں ، سب کے سب آج نااہل ہوگئے ہیں جس پر ہم اللّٰہ کا شکر ادا کرتے ہیں۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ اس قوم کو امریکا سے معافی کی ضرورت بالکل نہیں ہے ، کیونکہ یہ ایک خود دار قوم ہے ، مگر اس ملک میں جو بد قسمتی سے ہماری اشرافیہ ہے وہ ڈر گئے اور انہوں نے پوری کوشش کرکے بائیس کروڑ لوگوں کی منتخب حکومت کو سازش کرکے ہٹایا.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں