کچھ ماہ مشکلات ہیں، پھر آسانیاں ہی آسانیاں:وزیر خزانہ

وفاقی وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں ہونے والے بڑے اضافے کے بعد پاکستانیوں کو نوید سناتے ہوئے کہا ہے کہ ایک ڈیڑھ ماہ قوم کو مشکلات برداشت کرنا پڑیں گی، پھر آسانیاں پیدا ہونا شروع ہو جائیں گی۔

یہ بات انہوں نے ایک نجی ٹیلی وژن سے گفتگو کرتے ہوئے کہی۔ مفتاح اسماعیل کا کہنا تھا کہ آئندہ وفاقی بجٹ میں کافی معاملات کو ہم سمیٹ لیں گے۔ اس وقت بھی حکومت کی جانب سے ڈیزل کی مد میں 23 روپے اور پیٹرول پر 8 روپے سبسڈی دی جا رہی ہے۔

مفتاح اسماعیل کا کہنا تھا کہ ہم اگر پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کو نہ بڑھاتے تو ڈالر کی قدر میں مزید اضافہ ہو جانا تھا اور مہنگائی بھی بڑھنی تھی۔ پی ٹی آئی حکومت نے آئی ایم ایف سے جو معاہدہ کیا تھا اس کے مطابق پیٹرول کی قیمت میں دو ماہ پہلے ہی 30 روپے کا اضافہ ہو جانا چاہیے تھا۔

وزیر خزانہ کا کہنا تھا کہ ایک ڈیڑھ ماہ مشکل گزریں گے، پھر آسانی ہوگی۔ ابھی کوئلے سے بننے والی بجلی پر فیول کا خرچہ 30 روپے آ رہا ہے۔ کوئلے کی قیمتیں ایل این جی سے بھی زیادہ ہوگئی ہیں۔ ہمیں شارٹ ٹرم پر مہنگی ایل این جی خریدنا پڑ رہی ہے۔ تاہم رواں ماہ جون کے مہینے میں بجلی کی قیمتیں بڑھنے کا کوئی امکان نہیں ہے۔ وزیراعظم کے سامنے توانائی بچانےکی سفارشات رکھیں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ ہم روس سے گندم خریدنے کے لئے بات کر رہے ہیں۔ اگر روس 30 فیصد سستی گندم اور تیل دے گا تو لے لیں گے۔ تاہم انہوں نے انکشاف کیا کہ پی ٹی آئی حکومت نے روس کو پیٹرولیم مصنوعات کی فراہمی کے حوالے سے جو خط لکھا تھا اس کا جواب ابھی تک نہیں آیا۔

یہ بھی پڑھیں: حکومت نے پیٹرول بم گرا دیا،فی لیٹر 30 روپے اضافہ

خیال رہے کہ حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 30 فی لیٹر اضافہ کر دیا ہے جس کے بعد پیٹرول کی فی لیٹر قیمت 209 روپے 86 پیسے ہو گئی ہے۔

حکومت کی جانب سے ایک ہفتے میں پیٹرول 60 روپے فی لیٹر مہنگا کیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ مٹی کے تیل کی قیمت 181 روپے 94 پیسے جبکہ ڈیزل کی نئی قیمت 204 روپے 15 پیسے ہوگی۔

وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے پریس کانفرنس میں کہا کہ 25 مارچ کو چین نے 2اعشاریہ3ارب ڈالر واپس لے لیے تھے، چین نے اس پر بہت مشکل شرائط رکھ کر شرح سود بھی بہت زیادہ بتایا تھا، ہم اس معاملے پر چین سے مسلسل رابطے میں تھے، وزیر خارجہ بلاول بھٹو نے بھی چین جا کر اس معاملے پر بات کی، چین نے اب یہ رقم دینے پر رضامندی ظاہر کر دی ہے، کچھ دنوں میں یہ پیسے ہمیں مل جائیں گے، اس رقم سے ہمارے زرمبادلہ کے ذخائر میں بہتری آئے گی۔

مفتاح اسماعیل نے کہا کہ انٹرنیشنل مارکیٹ میں تیل کی قیمتیں مزید بڑھ گئی ہیں، عالمی منڈی میں قیمتیں بڑھنے سے ہمیں نقصان ہو رہا ہے، اوگرا کی آئندہ سمری جب آئے گی تو اس وقت تک نقصان اور بھی بڑھ جائے گا، 3جون سے پیٹرول کی فی لیٹر قیمت میں 30 روپے کا اضافہ ہو جائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں