سپریم کورٹ کا وزیر اعلی پنجاب کے انتخاب سے متعلق تحریری حکم نامہ جاری

اسلام آباد: سپریم کورٹ آف پاکستان نے وزیراعلیٰ پنجاب کے انتخاب سے متعلق تحریری حکم نامہ جاری کردیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق 10صفحات پر مشتمل فیصلہ جسٹس اعجازالاحسن نے تحریر کیا۔تحریری فیصلے میں کہا گیا ہے کہ وزیراعلیٰ پنجاب کے انتخاب کا سیکنڈ پول 22 جولائی کو پنجاب اسمبلی میں ہوگا، وزیراعلیٰ پنجاب کے انتخاب کے سیکنڈ پول کو ڈپٹی اسپیکر پنجاب اسمبلی چیئرکریں گے، اسپیکر یا ڈپٹی اسپیکر پول کے بعد باقاعدہ نوٹیفکیشن جاری کریں گے۔

حکم نامے میں کہا گیا ہے کہ فریقین کی یقین دہانی پر لاہور ہائی کورٹ کے حکم میں ترمیم کر رہے ہیں،وزیراعلیٰ حمزہ شہباز اور ان کی کابینہ عدالت کو کرائی گئی یقین دہانی کے مطابق صاف شفاف انتخاب کرائیں، پنجاب کے عوام کو نمائندگی اورگورننس کے حقوق کے لیے وزیراعلیٰ اپنی ذمہ داری 22 جولائی تک پوری کریں گے،لاہور ہائی کورٹ 27 مئی کے مختصر فیصلےکی تفصیل ایک ہفتےکے بعد جاری کرے۔

سپریم کورٹ کا حکم نامے میں کہنا ہےکہ 17 جولائی کے ضمنی انتخابات الیکشن کمیشن کے شیڈول کے مطابق کرائے جائیں، جن حلقوں میں ضمنی انتخابات ہونے ہیں وہاں کوئی ترقیاتی اسکیم یا منصوبہ نہیں شروع کیا جائےگا، الیکشن کمیشن، ریاستی ادارے، وفاقی صوبائی وزرا، مشیر اور سیاسی جماعتیں انتخابات کے ضابطہ اخلاق پر سختی سے عمل کریں، کوئی بھی ریاستی مشینری، ایجنسی یا فرد کسی کو ہراساں یا انتخابات پر اثر انداز نہیں ہوگا۔

حکم نامے میں کہا گیا ہےکہ اسپیکر پنجاب اسمبلی نے ایوان کا ماحول خوشگوار رکھنے کی یقین دہانی کرائی، امید ہےکہ پرویز الٰہی اور حمزہ شہباز کی پرامن انتخابات کی یقین دہانی پر عمل درآمد ہوگا،مل بیٹھ کر مسئلےکا حل نکالنے پر پی ٹی آئی ، مسلم لیگ ق اور مسلم لیگ ن کا شکریہ ادا کرتے ہیں،لاہور ہائی کورٹ کے فیصلےکے خلاف کیس نمٹایا جاتا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں