ٹائی ٹینک سےمتعلق وہ 6 راز جو اب تک بحر اوقیانوس میں دفن ہیں

ٹائی ٹینک ایک ایسا جہاز تھا کہ جس کو بنانے میں بے تہاشا پیسہ لگا تھا. اس کے اوپر فلم بھی بنائی گئی جو بے حد مقبول ہوئی تھی۔ ٹائی ٹینک اتنی بڑی لاگت سے بنا مگر بھر بھی ڈوب گیا. اگر کبھی اس کے بارے میں سوچیں کہ جس وقت یہ ڈوبا ہو گا تو اس وقت کیا منظر ہو گاَ؟ ساتھ ہی آپ کو یہ بتاتے چلیں کہ اس بھیانک رات ٹائی ٹینک کا حادثہ اتنا خطرناک تھا کہ اس کا ملبہ ڈھونڈنے میں تقریباً 75 سال لگ گئے تھے۔

اس حادثے کے بارے میں اب تک دنیا بھر کے سائنسدانوں کی جانب سے کافی تحقیق کی جا چکی ہے، لیکن اب بھی کچھ ایسے راز ہیں، جو ابھی تک بحر اوقیانوس میں دبے ہوئے ہیں، جن سے پردہ اٹھنا ابھی باقی ہے۔

آج سے تقریباً 110 سال پہلے 16 اپریل 1912 کی رات ٹائی ٹینک کے ساتھ حادثہ پیش آیا تھا جس میں وہ ایک برفانی تودے سے ٹکرا گیا تھا۔ رپورٹ کے مطابق ٹائی ٹینک اس وقت تقریباً 41 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے سفر کر رہا تھا۔ وہ انگلینڈ کے ساؤتھمپٹن سے امریکہ میں نیویارک جا رہا تھا۔ 16 اپریل کی رات جب جہاز میں سوار تمام مسافر سو رہے تھے، اسی وقت ٹائی ٹینک ایک برفانی تودے سے ٹکرا گیا اور یہ جہاز ایک خوفناک حادثے کا شکار ہوگیا۔ اس حادثے میں 1500 سے زیادہ مسافروں کی موت ہو گئی۔ آپ کو بتاتے چلیں کہ یہ حادثہ بحر اوقیانوس میں پیش آیا۔ ٹائی ٹینک کے بارے میں ایک بات کہی جاتی تھی کہ یہ دنیا کا نہ ڈوبنے والا جہاز تھا لیکن یہ اپنے پہلے سفر کے دوران ہی ڈوب گیا تھا۔

آئیے آپ کو ٹائی ٹینک سے متعلق کچھ ایسے راز بتاتے ہیں کہ جن سے آج تک پردہ نہیں اٹھایا جا سکا ہے۔

1. دنیا کا نہ ڈوبنے والا جہاز کیسے ڈوب گیا؟

دنیا کے سب سے بڑے جہاز ٹائی ٹینک کے بارے میں ایک بات کہی گئی کہ یہ ایک ایسا جہاز ہے جو کبھی نہیں ڈوبے گا۔ تاہم ماہرین کی بنیاد پر تیار کی گئی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ ٹائی ٹینک بناتے وقت اس میں کچھ خاص کمپارٹمنٹ بنائے گئے تھے، تاکہ اگر کسی وجہ سے جہاز کا کوئی حصہ ڈوب جائے تو بھی اس کا ایک حصہ ڈوبنے سے بچ جائے گا تاہم جہاز کو اس لحاظ سے ڈیزائن کیے جانے کے باوجود کہ یہ کیسے ڈوبا؟ سائنسدان آج تک یہ معلوم نہیں کر سکے۔ کئی تھیوریز کہتی ہیں کہ جہاز کے ایک حصے میں نصف لمبائی تک سوراخ ہونے کی وجہ سے ٹائی ٹینک کو ڈوبنے سے نہیں بچایا جا سکا۔

2. کیا بلیو بینڈ نے ہزاروں لوگوں کو مارا؟

اطلاعات کے مطابق بحر اوقیانوس میں تیز رفتاری سے جہاز رانی کے لیے احترام دیا جاتا ہے جس میں نیلے رنگ کی پٹی پائی جاتی ہے۔ کئی رپورٹس میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ ٹائی ٹینک اسی اعزاز کا مستحق تھا، جس کی وجہ سے بحر اوقیانوس کے پار اس کی رفتار بلیو بینڈ حاصل کرنے کے لیے بڑھا دی گئی۔ ٹائی ٹینک اپنے پہلے سفر کے لیے ساؤتھمپٹن سے نیویارک کے لیے روانہ ہوا تھا جسے وہ مکمل بھی نہ کر سکا۔ ایسے میں ٹائی ٹینک کی رفتار پر بھی سوالات اٹھ رہے ہیں۔

2 وگوں کی موت کی یہ وجہ بتائی جاتی ہے؟

کئی رپورٹس کے مطابق بحر اوقیانوس میں ہونے والے اس خوفناک حادثے میں 1500 سے زائد افراد ہلاک ہوئے تھے۔ اتنے زیادہ لوگوں کی ہلاکت کی ایک بڑی وجہ اس دوران لائف بوٹس کی تعداد میں کمی اور مسافروں کے لیے کیے گئے حفاظتی انتظامات تھے۔ ایسے میں اتنے لوگوں کی موت کے حوالے سے جو سوالات اٹھائے جا رہے ہیں ان کے جوابات کا ابھی تک پتہ نہیں چل سکا ہے۔

4. کیا ٹائٹینک کی رفتار حادثے کی وجہ بنی؟

ٹائی ٹینک کے کیپٹن سمتھ پر یہ بھی الزامات تھے کہ وہ جلد از جلد بحر اوقیانوس کو عبور کرنا چاہتے تھے جس کی وجہ سے وہ جہاز کو تیز رفتاری سے لے جا رہے تھے۔ ساتھ ہی کئی رپورٹس میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ کیپٹن اسمتھ نے جہاز کی رفتار اس لیے بڑھا دی تھی کیونکہ وہ جلد سے جلد کوئلہ ختم کرنا چاہتے تھے۔ ایسے میں ٹائی ٹینک کی رفتار پر اکثر کئی سوالات اٹھتے رہے ہیں۔

5. ٹائی ٹینک کے دو ٹکڑے کیسے ہوئے؟

ٹائی ٹینک کا دو ٹکڑوں میں ٹوٹنا اپنے آپ میں ایک بہت حیران کن موضوع ہے۔ یہی وجہ ہے کہ آج تک دنیا بھر کے بہت سے ماہرین یہ معلوم نہیں کر سکے کہ ٹائی ٹینک کے دو ٹکڑوں کی وجہ کیا تھی۔

6 اگر دوربین ہوتی تو حادثہ ٹل جاتا؟

ٹائی ٹینک کے حادثے کی ایک اہم وجہ یہ بھی بتائی گئی ہے کہ عملے کے پاس دوربین نہیں تھی۔ یہ سوال اکثر اٹھایا جاتا ہے کہ ٹائی ٹینک جیسے بڑے جہاز کے عملے اور کپتان کے پاس دوربین کیوں نہیں تھی؟ کئی رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ اگر عملے کے پاس دوربین ہوتی تو وہ اس خطرے کو بہت پہلے بھانپ لیتے جس سے اتنا بڑا حادثہ ٹل جاتا اور ہزاروں جانیں بچ جاتیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں