کروڑ پتیوں کی 3 عادتیں، کیا آپ ان کو اپنانا چاہیں گے؟

مشہور کتاب رِچ کڈز کے مصنف، مالیاتی منصوبہ ساز اور اکاؤنٹنٹ ٹام کورلی نے امیر افراد کی عادات کو سمجھنے کا 5 سالہ مطالعہ شروع کیا ہے۔ یہ جاننے کی کوشش کے طور پر کہ دنیا کے امیر ترین لوگ اپنے پیسوں کے بارے میں کیسے سوچتے ہیں؟

سی این بی سی کے لئے ایک مضمون میں، ٹام کورلی نے لکھا کہ ان 225 کروڑ پتیوں میں سے ہر ایک کا انٹرویو ان چار میں سے ایک زمرے میں آیا:

1: سرمایہ کاروں کی بچت

امیر افراد کی روزانہ کی نوکری سے قطع نظر، یہ لوگ بچت اور سرمایہ کاری کو اپنی روزمرہ کی عادات کا حصہ بناتے ہیں۔ وہ اپنی دولت بڑھانے کے لئے مسلسل ہوشیار طریقے سوچ رہے ہیں۔

2: کوہ پیمائوں کی طرح آگے بڑھنے کی لگن

یہ لوگ ایک بڑی کمپنی کے لئے کام کرتے ہیں اور کارپوریٹ کی سیڑھی پر چڑھنے کے لئے اپنا تمام وقت اور توانائی وقف کرتے ہیں یہاں تک کہ وہ ایک اعلیٰ انتظامی عہدے پر پہنچ جاتے ہیں، جس میں بہت زیادہ تنخواہ ہوتی ہے۔

3: باصلاحیت

وہ اپنے کاموں میں سب سے بہتر ہیں، اور ان کے علم اور تجربے کی وجہ سے انہیں زیادہ اجرت دی جاتی ہے۔ رسمی تعلیم ان کیلئے ثانوی حیثیت اختیار کر جاتی ہے۔

خواب دیکھنے والے اور کاروباری افراد

اس گروپ میں ہر کوئی ایک خواب دیکھ رہا ہے، جیسے کہ اپنا کاروبار شروع کرنا، ایک کامیاب اداکار، موسیقار یا مشہور مصنف بننا۔ خواب دیکھنے والوں کو پسند ہے کہ وہ زندگی گزارنے کے لئے کیا کرتے ہیں، اور ان کا جذبہ ان کے بینک کھاتوں میں ظاہر ہوتا ہے۔

بچت کرنے والے سرمایہ کاروں کا راستہ سب سے کم خطرناک ہوتا ہے۔ کم از کم ایک کاروباری خواب یا فنکارانہ جذبے کے حصول کے مقابلے میں لیکن ٹام کورلی کے مطابق 88 فیصد کروڑ پتییوں کیلئے خاص طور پر بچت ان کی طویل مدتی مالی کامیابی کے لئے اہم ہے۔

کورلی کی تحقیق کے مطابق 3 ملین سے 7 ملین ڈالر تک کی دولت کمانے اور ایک شخص کو کروڑ پتی بننے میں اوسطاً 12 سے 32 سال لگتے ہیں۔

تین بنیادی عادات:

1: تنخواہ کا 20 فیصد محفوظ کریں

ٹام کورلی نے وضاحت کی کہ ہر کسی کو چاہیے کہ وہ اپنی تنخواہ کا 20 فیصد بچت کرے۔

2: اپنی بچت کا کچھ حصہ باقاعدگی سے انویسٹ کریں

چونکہ بچت کرنے والے سرمایہ کار اپنی بچت کو لگاتار لگاتے ہیں، اس لئے وقت کے ساتھ ساتھ ان کی رقم دگنی ہو جاتی ہے۔ یہ بات درست ہے کہ جب وہ یہ کام کرنا شروع کرتے ہیں تو ان کو اس میں نقصان بھی اٹھانا پڑتا ہے صبر، تحمل اور اپنی غلطیوں سے سیکھتے ہوئے یہ افراد صرف 10 سال کے بعد، بڑی رقم جمع کرنا شروع کر دیتے ہیں۔ کورلی نے دیکھا کہ اپنا کام کرنے والوں کی زندگی کے آخری سالوں میں، بچت کرنے والے سرمایہ کاروں کی دولت اوسطاً 3.3 ملین ڈالر تک بڑھ گئی۔

کروڑ پتی جنہوں نے ایک خواب کا تعاقب کیا اور ایک کاروبار شروع کیا (جسے ڈریمر-انٹرپرینیور بھی کہا جاتا ہے)، خاص طور پر اپنے خوابوں کی تعاقب کے ابتدائی مراحل میں، اپنی بچت کی سرمایہ کاری کرنے کے قابل نہیں تھے۔ انہوں نے جو بھی بچت کی وہ اپنے خواب کو پورا کرنے کے لئے ورکنگ کیپیٹل کے طور پر استعمال کی۔

تاہم، یہ دلچسپ بات ہے کہ ایک بار جب زیادہ تر تاجروں نے دستیاب نقدی کے بہاؤ کی صورت میں کامیابی حاصل کی، تو انہوں نے اپنے منافع میں سرمایہ کاری شروع کر دی۔

3: اخراجات پر کنٹرول

ٹام کورلی کے مطابق، کروڑ پتیوں کی تین قسمیں ہیں لیکن ان سب میں ایک چیز مشترک ہے اور وہ کفایت شعاری تھی۔ ان کروڑ پتیوں کے لئے، کفایت شعاری اس لمحے سے شروع ہوئی جب انہیں پہلی تنخواہ ملی۔ خواب دیکھنے والوں یا کاروباری افراد کے لئے، یہ سب اس لمحے سے شروع ہوا۔

کفایت شعاری کے لئے 3 چیزیں کرنی ہیں:

آگاہی: یہ جاننا کہ آپ کا پیسہ کیسے خرچ کیا جا رہا ہے۔

معیار پر توجہ مرکوز کریں: معیاری مصنوعات اور خدمات پر اپنا پیسہ خرچ کریں۔

شاپنگ ڈیل: سب سے کم قیمت پر خریداری کرکے کم سے کم رقم خرچ کریں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں