لاہور: 200 سے زائد ٹارگٹ کلرز کی موجودگی کا انکشاف

لاہور میں بڑے پیمانے پر شہریوں کو قتل کرانے کے منصوبے کا انکشاف ہوا ہے۔ اس وقت شہر میں 17 گروپوں کے 200 سے زیادہ ٹارگٹ کلرز موجود ہیں۔ رپورٹ میں یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ ان کا اگلا نشانہ سیاست دان اور پولیس افسران ہوسکتے ہیں۔

ایک اسپیشل رپورٹ میں یہ انکشاف ہوا ہے کہ لاہور میں بیرون ملک سے بڑے پیمانے پر شہریوں کو قتل کرانے کا انکشاف ہوا ہے۔ آئی جی پنجاب نے کارروائی کیلئے ٹارگٹ کلرز کی اسپیشل رپورٹ سی سی پی او کو بھجوا دی ہے۔

آئی جی پنجاب کی طرف سے سی سی پی او لاہور کو جرائم پیشہ عناصر کے خاتمے کے لئے تجاویز بھی دے دی گئی ہیں اور اب گروپوں کے زیر اثر افراد کی نقل و حرکت مانیٹر کی جائیں گی۔

رپورٹ میں یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ پیسوں کے حصول کے لئے ٹارگٹ کلرز لئے شہریوں کو قتل کرتے ہیں اور اب ان کا اگلا ٹارگٹ پولیس افسران اور سیاست دان ہوسکتے ہیں۔

اس کے علاوہ رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ ٹارگٹ گلرز گیٹ وے اور انٹرنیٹ کے ذریعے رابطہ کرتے ہیں جس کی سجہ سے انہیں ٹریس کرنا مشکل ہے۔

سی سی پی او کو بھجوائی گئی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ شہر میں خوف و ہراس ہے، لہذا شوٹرز کی اندرون بیرون ملک رابطوں کا سراغ لگایا جائے گا اور جرائم پیشہ عناصر کا قلع قمع کیا جائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں