شفاف انتخابات: وزیر اعظم کا الیکٹرانک ووٹنگ کا حکم

اسلام آباد (پبلک نیوز) وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ غیر ملکی پاکستانیوں کی ووٹنگ پر مجھے اپ ڈیٹ دیں ٗ ہمیں اب یقین ہو جانا چاہیے کہ پاکستان میں روایتی الیکشن کا نظام نہیں چل سکتا ٗ امریکہ میں ٹرمپ کے ا نتخابات کی مثال ہمارے سامنے ہیں کہ اس کے اتنی کوشش کی مگر ایک چیز نہیں ڈھونڈ سکا کہ الیکشن میں دھاندلی ہوئی ہے۔ہمیں اب پاکستان میں شفاف انتخابات کیلئے ای وی ایم مشین ٹیکنالوجی کا استعمال کرنا چاہیے۔

وزیر اعظم عمران خان نے وفاقی کابینہ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل نے ایک پینل تشکیل دیا ٗاس پینل جس کا نام یکٹ آئی ہے اس کی ایک رپورٹ آئی ہے جس کے مطابق ہر سال ایک ہزار ارب ڈالر غریب ملکوں سے غیر قانونی طور پر امیر ممالک کے آف شور اکاؤنٹس میں جاتا ہے۔ اس امیر ممالک میں غیر ممالک کا جو پیسہ پڑا ہوا ہے وہ سات ہزار ارب ڈالر ہے۔ یہ پیسہ ان غریب ملکوں کے نواز شریف اور زرداری منی لانڈرنگ کے ذریعے با ہر بھیجتے ہیں۔ یہ ان غریب ممالک سے یہ پیسہ باہر بھیجا جاتا ہے تو وہ اس کیلئے اداروں کو کمزور کرتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ان غریب ممالک کے بااثر افراد کیسے منصوبے لاتے ہیں جن سے کک بیکس حاصل کی جا سکیں۔میگا پراجیکٹس کے ساتھ بڑا منافع ملتا ہے ان کو ٗ پھر وہ سارا پیسہ باہر لے جاتے ہیں ٗ عوام کو مقروض کر دیتے ہیں۔ عوام قرضے تلے دب جاتی ہے۔ اور مہنگائی میں اضافہ ہوتا ہے۔یہ لوگ پھر کرپشن کو معاشرے میں تسلیم کروانے کیلئے میڈیا کو استعمال کرتے ہیں۔کیونکہ ان کے پاس کرپشن کا پیسہ وافر مقدار میں ہوتا ہے کہ پھر وہ پیسہ اداروں میں چلتا ہے ٗ میڈیا کو خریدا جاتا ہے۔سب سے بڑا نقصان یہ ہوتا ہے کہ قوم کی اخلاقیات ختم کر دی جاتی ہیں۔

وزیر اعظم نے کہا کہ کرپشن کو برا نہیں سمجھا جاتا ٗ پھر ایسے جملے سننے کو ملتے ہیں ٗ کھاتا ہے تو لگاتا بھی ہے ٗ یا ایک زرداری سب پے بھاری۔یعنی کوئی انسان الیکشن میں لوگوں کو خرید رہا ہے تو یہ بھی بہت بڑی خوبی بنا دی جاتی ہے۔پھر یہ ہوتا ہے کہ قوم کی اخلاقیات کو ختم کر دیتے ہیں۔ ایسے ملکوں میں انصاف نہیں ہو سکتا۔ پھر وہاں پر طاقتور کیلئے ایک قانون ہوتا ہے غریبوں کیلئے دوسرا۔ طاقتور کو این آر او مل جاتا ہے اور غریب جیلوں میں جاتے ہیں۔یہ قوم اس طرح تباہ ہوتی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں