نیوزی لینڈ کی وزیراعظم جیسنڈا آرڈن کا مستعفی ہونے کا اعلان

کرائسٹ چرچ : نیوزی لینڈ کی وزیراعظم جیسنڈا آرڈن نے وزارت عظمیٰ کے عہدے سے مستعفی ہونے کا اعلان کر دیا ہے

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ جیسنڈا آرڈرن کی جانب سے یہ اعلان کیا گیا ہے کہ وہ اگلے ماہ 7 فروری کو نیوزی لینڈ کی وزات عظمیٰ اور لیبر پارٹی کی رہنما کے منصب سے سبکدوش ہو جائیں گی ۔

42 سالہ جیسنڈا آرڈرن کا کہنا تھا کہ گرمیوں کی چھٹیوں کے دوران انہوں نے اپنے مستقبل کے حوالے سے فیصلہ کر لیا تھا، وہ سمجھتی تھیں کہ ہم وہ تلاش کرلیں گے جو معاملات چلانے کے لئے ضروری ہے لیکن بدقسمتی سے وہ تلاش نہیں کر پائیں ہیں ۔ان کا کہنا تھا کہ ایسے حالات میں میرا اپنی پوزیشن پر کام کو جاری رکھنا نیوزی لینڈ کے حق میں ضرر رساں ہو سکتا ہے، ہمیں ایک نئی قیادت کی ضرورت ہے ۔

جیسنڈا آرڈرن دنیا کی سب سے کم عمر خاتون سربراہ ہیں ، 2017 میں 37 سال کی عمر میں وزیر اعظم منتخب ہوئیں انہوں نے کوویڈ 19 کے دوران کرائسٹ چرچ میں 2 مساجد پر دہشت گردانہ حملے سمیت دیگر بڑے چیلنجز کے دوران نیوزی لینڈ کی قیادت کی ہے ۔

آسٹریلیا کے وزیر اعظم انتھونی البانی نے آرڈرن کو طاقت ، ذہانت اور ہمدردی کی رہنما کے طور پر خراج تحسین پیش کیا ہے ۔سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹویٹر پر انہوں نے اپنے ٹوئٹ میں لکھا کہ ” جیسنڈا نیوزی لینڈ کیلئے ایک زبردست وکیل رہی ہیں، بہت سے لوگوں کے لیے ایک تحریک اور میرے لیے ایک بہترین دوست “۔

واضح رہے کہ آرڈن کی مدت وزیر اعظم کے طور پر 7 فروری کے بعد ختم ہو جائے گی، لیکن وہ اس سال کے آخر میں ہونے والے انتخابات تک رکن پارلیمنٹ کے طور پر برقرار رہیں گی ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں