لاپتہ افراد کی رہائی کے بدلے بھاری رقوم کا مطالبہ، پشاورہائیکورٹ نے وزیراعلیٰ کو طلب کرلیا

لاپتہ افراد کی رہائی کے بدلے بھاری رقوم کا مطالبہ، پشاورہائیکورٹ نے وزیراعلیٰ کو طلب کرلیا
کیپشن: Peshawar High Court summoned the Chief Minister demanding huge sums of money in exchange for the release of missing persons

ویب ڈیسک: چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ نے لاپتا افراد کے کیس میں اضافہ ہونے اور پولیس اور سی ٹی ڈی حکام کی جانب لوگوں کی رہائی کے عوض بھاری رقوم طلب کرنے پر وزیراعلیٰ علی امین گنڈاپور کو 22 جولائی کو طلب کرلیا۔

تفصیلات کے مطابق پشاور ہائی کورٹ نے لاپتا افراد کے کیسز کی سماعت کی۔ سماعت چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ جسٹس اشتیاق ابراہیم پر مشتمل سنگل بنچ نے کی۔

چیف جسٹس نے کہا کہ وزیراعلی خیبر پختونخوا منتخب وزیراعلی ہیں، وہ خود عدالت میں آ کر اس حوالے سے پیش ہوں، گلبرگ سے صوابی کے رہائشی کو اغوا کیا گیا اور اب پولیس 70 لاکھ روپے طلب کررہی ہے۔ خیبر پختونخوا میں روز بروز لاپتا افراد کے کیسز میں اضافہ ہو رہا ہے۔

جسٹس اشتیاق ابراہیم نے کہا کہ لاپتا افراد کے رشتہ داروں کی جانب سے پولیس اور سی ٹی ڈی حکام کے اس عمل میں ملوث ہونے کی شکایات آ رہی ہیں، حکم نامہ کے مطابق اس ضمن میں پولیس اور سی ٹی ڈی پر یہ بھی الزام ہے کہ وہ ان لاپتا افراد کی رہائی کے بدلے بھاری رقوم طلب کررہے ہیں جو کہ ایک سنگین مسئلہ ہے۔

   جسٹس اشتیاق ابراہیم نے کہا کہ پولیس کے خلاف ان واقعات کی شکایات بڑھ رہی ہیں اور آئے روز پولیس اور سی ٹی ڈی حکام کے خلاف ایسے الزامات لگ رہے ہیں، عدالت کے پاس اس کے سوا دوسرا کوئی چارہ نہیں کہ وزیراعلی خیبرپختونخوا کو عدالت طلب کیا جائے۔

بعدازاں عدالت نے وزیراعلی خیبر پختونخوا علی امین گنڈا پور کو 22 جولائی کو طلب کرلیا۔ عدالت نے کہا کہ ایک صوبے کے منتخب وزیراعلی کی حیثیت سے یہ واقعات رونما ہورہے ہیں لہذا ان کا اس سلسلے میں کیا کردار رہا ہے؟ اس ضمن میں اب تک ان واقعات کی روک تھام کے لیے کیا اقدامات اٹھائے گئے؟

Watch Live Public News