عمران خان کو PTI چیئرمین کے عہدے سے ہٹانے کی درخواست پر فیصلہ محفوظ

عمران خان کو PTI چیئرمین کے عہدے سے ہٹانے کی درخواست پر فیصلہ محفوظ
لاہور ہائیکورٹ نے سابق وزیر اعظم عمران خان کی نااہلی کے لیے دائر درخواست کے قابل سماعت ہونے پر فیصلہ محفوظ کرلیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق لاہورہائیکورٹ نےعمران خان کو تحریک انصاف کے چیئرمین کےعہدے سے ہٹانے کی درخواست قابل سماعت ہونے پرفیصلہ محفوظ کر لیا ہے۔ جسٹس ساجد محمود سیٹھی نے درخواست پرسماعت کی، درخواست گزار کا کہنا تھا کہ این اے95 سے عمران خان کو نااہل قرار دیا جاچکا ہے، اب وہ پارٹی چیئرمین شپ رکھنےکا استحقاق بھی نہیں رکھتے۔ لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس ساجدمحمود سیٹھی نے عمران خان کی نااہلی کےلیے محمد آفاق ایڈووکیٹ کی جانب سے دائردرخواست پر سماعت کی جس میں وفاقی حکومت، الیکشن کمیشن اور عمران خان کو فریق بنایا گیا ہے۔ درخواست گزار نے مؤقف اختیار کیا کہ عمران خان این اے95 سے نااہل قرار دیے جاچکے ہیں، الیکشن کمیشن کے فیصلے کے بعد عمران خان نااہل ہو چکے ہیں، وہ پارٹی چیئرمین شپ کا استحقاق بھی نہیں رکھتے لہٰذا انہیں چیئرمین کے عہدے سے ہٹانےکا حکم دیا جائے۔ سماعت کے آغاز پر عدالت نے وکیل کو یہ ہدایت کی کہ عمران خان کوآرٹیکل 63 ون تھری کےتحت نااہل کیا گیا ہے وہ پڑھ کر سنائیں اس پر وکیل درخواست گزار کا کہنا تھا کہ عمران خان آرٹیکل62، 63 کے تحت اب پارٹی عہدہ نہیں رکھ سکتے ہیں۔ عدالت نے استفسار کیا کہ کیسے نہیں رکھ سکتے؟ عدالت کو مطمئن کریں، اس پر وکیل درخواست گزار نے مؤقف اختیار کیا کہ مجھےعبوری ریلیف فی الحال بیشک نہ دیں مگرفریقین کو نوٹس جاری کردیں۔ اس پر جسٹس ساجد محمود کا کہنا تھا کہ عدالت درخواست کےقابل سماعت ہونے پرفیصلہ محفوظ کررہی ہے۔
ایڈیٹر

احمد علی کیف نے یونیورسٹی آف لاہور سے ایم فل کی ڈگری حاصل کر رکھی ہے۔ پبلک نیوز کا حصہ بننے سے قبل 24 نیوز اور سٹی 42 کا بطور ویب کانٹینٹ ٹیم لیڈ حصہ رہ چکے ہیں۔