خواتین کی مرضی ہے کہ وہ برقع پہنیں یا بکنی:ملالہ یوسفزئی

خواتین کی مرضی ہے کہ وہ برقع پہنیں یا بکنی:ملالہ یوسفزئی
ملالہ یوسفزئی نے خواتین کے لباس کے انتخاب پربحث کرنے والوں کو اس کے بجائے بڑے مسائل پرتوجہ مرکوزکرنے کا مشورہ دیا ہے۔ انسٹاگرام پرملالہ نے اپنے تازہ ترین پوڈیم آرٹیکل کا لنک شیئرکرتے ہوئے لکھا ، ‘ برسوں پہلے میں نے اپنی کمیونٹی میں خواتین کو برقع پہننے پرمجبورکرنے والے طالبان کےخلاف بات کی تھی اورگزشتہ ماہ مہینے میں نے لڑکیوں کو اسکول میں حجاب اُتارنے پرمجبورکرنے والے ہندوستانی حکام کے خلاف بات کی تھی ‘۔
View this post on Instagram

A post shared by Malala (@malala)

ملالہ کے مطابق، ‘ یہ تضادات نہیں ہیں، دونوں صورتوں میں خواتین کے ساتھ غیرمناسب سلوک کیا جارہا ہے، اگر کوئی مجھے سر ڈھانپنے پرمجبورکرے گا تو میں احتجاج کروں گی، اگرکوئی مجھے اسکارف اتارنے پرمجبورکرتا ہے تومیں احتجاج کروں گی’۔ ملالہ نے مزید لکھا کہ، آئیں انفرادی آزادی، خود مختاری، تشدد کو روکنے کے بارے میں، تعلیم اور آزادی کے بارے میں بات کریں’۔ طویل پوسٹ کے اختتام پرملالہ کا کہنا تھا کہ کسی دن میں اپنی وارڈ روب میں تبدیلی لاسکتی ہوں، ممکن ہے نہیں لاوں لیکن لباس کی کھوج اور اسے سمجھنا میری زندگی کا حصہ رہے گا، جیسے کہ ہرعورت کےحق کا دفاع کرنا کہ وہ کیا پہنتی ہے۔ مجھے اپنی پھولوں والی شلوارقمیض پسند ہے، مجھے اپنی جینز بھی پسند ہےاورمجھے اپنے اسکارف پرفخر ہے۔

Watch Live Public News

ایڈیٹر

احمد علی کیف نے یونیورسٹی آف لاہور سے ایم فل کی ڈگری حاصل کر رکھی ہے۔ پبلک نیوز کا حصہ بننے سے قبل 24 نیوز اور سٹی 42 کا بطور ویب کانٹینٹ ٹیم لیڈ حصہ رہ چکے ہیں۔