غلط معلومات کے پھیلاؤ کے خطرے کے پیش نظر گوگل کا مہم شروع کرنے کا اعلان

غلط معلومات کے پھیلاؤ کے خطرے کے پیش نظر گوگل کا مہم شروع کرنے کا اعلان

مقبول سرچ انجن گوگل نے یورپی پارلیمنٹ میں انتخابات کے حوالے سے غلط معلومات کے پھیلاؤ کے خطرے کے پیش نظر گوگل نے مہم شروع کرنے کا اعلان کیا ہے۔

گوگل نے اپنی بلاگ پوسٹ میں بتایا ہے کہ گوگل پارلیمانی انتخابات اور آن لائن مواد سے نمٹنے کے لیے یورپی یونین کے 5 ممالک میں نئے سخت قوانین کے نفاذ سے قبل غلط معلومات کے خلاف مہم شروع کرنے کے لیے تیار ہے۔

گوگل کے مطابق جون میں یورپی یونین سے منسلک ممالک میں پالیسیاں اور قوانین منظور کرنے کے لیے یورپی یونین میں انتخابات ہوں گے، قانون سازوں کو خدشہ ہے کہ ان انتخابات کے دوران آن لائن غلط معلومات کے پھیلاؤ سے ووٹرز متاثر ہو سکتے ہیں۔

پولینڈ، فرانس اور جرمنی نے پیر کے روز روس پر روس نواز پروپیگنڈا پھیلانے کے لیے ویب سائٹس کا ایک وسیع نیٹ ورک چلانے کا الزام عائد کیا ہے۔

یورپ کا ڈیجیٹل سروسز ایکٹ جو اس ہفتے نافذ ہو رہا ہے، جس کی تشہیر کے لیے غیر قانونی مواد اور عوامی سلامتی کو لاحق خطرات سے نمٹنے کے لیے آن لائن پلیٹ فارمز کی ضرورت ہوگی۔

گوگل کی داخلی جگ سو کے مطابق سرچ انجن گوگل یورپی یونین کے 5 ممالک جرمنی، اٹلی، بیلجیئم، فرانس اور پولینڈ میں یوٹیوب اور ٹک ٹاک جیسے پلیٹ فارمز پر متحرک اشتہارات کی ایک سیریز چلائے گا۔

اشتہارات میں ‘پری بنکنگ’ تکنیکیں شامل ہوں گی جو برسٹل اور کیمبرج یونیورسٹیوں کے محققین کے ساتھ شراکت میں تیار کی گئی ہیں، مہم کا مقصد ناظرین کو جوڑ توڑ کے مواد کا سامنا کرنے سے پہلے شناخت کرنے میں مدد کرنا ہے۔

یوٹیوب پر اشتہارات دیکھنے والے ناظرین سے ایک مختصر کثیر انتخابی سوالنامہ پُر کرنے کے لیے کہا جائے گا، جو یہ اندازہ لگانے کے لیے بنایا جائے گا کہ انہوں نے غلط معلومات کے بارے میں کیا سیکھا ہے۔

جنوری میں یورپی یونین ایکسٹرنل ایکشن سروس کی طرف سے کی گئی ایک تحقیق نے گمراہ کن معلومات کے 750 واقعات کا پردہ فاش کیا ہے، جس میں غیر ملکی اداکاروں کی طرف سے بہت سے لوگوں نے یوکرین پر ماسکو کے حملے کی حمایت کا اظہار کیا۔

گوگل کی یہ مہم کم از کم ایک مہینے تک جاری رہے گی، مہم کے نتائج بشمول لوگوں کی تعداد اور سروے کے جوابات، 2024 کے موسم گرما میں شائع کیے جانے کا امکان ہے۔ اگر یہ مہم کامیاب رہی تو اس کی مدت بڑھائی بھی جاسکتی ہے۔

Watch Live Public News