عاصمہ رانی قتل کیس: مجرم کو سزائے موت سنادی گئی

عاصمہ رانی قتل کیس: مجرم کو سزائے موت سنادی گئی
پشاور(پبلک نیوز) پشاور میں میڈیکل کی طالبہ عاصمہ رانی قتل کیس کا فیصلہ سنادیا گیا، ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج نے ملزم مجاہد آفریدی کو موت کی سزا کا حکم سنادیا.تفصیلات کے مطابق ایک مختصر فیصلہ سناتے ہوئے ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج اشفاق تاج نے مجاہد اللہ آفریدی کو سزائے موت سنائی اور دو ملزمان صدیق اللہ اور شاہ زیب کو بری کردیا۔ سکیورٹی خدشات کے پیش نظر جج نے سنٹرل جیل پشاور میں خصوصی سماعت بھی کی۔ میڈیکل کی طالبہ عاصمہ رانی کو شادی کی تجویز سے انکار کرنے پر 2018 میں کوہاٹ میں ہلاک کر دیا گیا تھا۔ اپنی موت سے قبل ایک ویڈیو بیان میں ، عاصمہ رانی نے آفریدی کو حملہ آور کے طور پر شناخت کیا تھا۔مجاہد اللہ آفریدی کو خیبر پختونخواہ پولیس نے متحدہ عرب امارات سے انٹرپول کے ذریعے ملک سے فرار ہونے کے بعد گرفتار کیا تھا۔ اس کیس کو پشاور ہائی کورٹ کے حکم پر کوہاٹ سے پشاور منتقل کردیا گیا تھا۔ گذشتہ سال 30 جولائی کو عدالت عظمی نے انسداد دہشت گردی عدالت کی بجائے عاصمہ کے قتل کے مقدمے کو باقاعدہ عدالت میں جاری رکھنے کا حکم دیا تھا۔سماعت کے دوران ملزم مجاہد اللہ آفریدی کے وکیل ایڈووکیٹ راجہ عامر عباس نے دلیل دی کہ متاثرہ شخص کو ذاتی دشمنی کے سبب ہلاک کیا گیا۔ انہوں نے استدلال کیا کہ اس جرم کو دہشت گردی کی سرگرمی نہیں سمجھا جاسکتا ہے اور اس کیس کو باقاعدہ عدالت میں بھیجا جانا چاہئے۔

مصنّف پنجاب یونیورسٹی کے شعبہ ابلاغیات سے فارغ التحصیل ہیں اور دنیا نیوز اور نیادور میڈیا سے بطور اردو کانٹینٹ کریٹر منسلک رہے ہیں، حال ہی میں پبلک نیوز سے وابستہ ہوئے ہیں۔