سعودی عرب میں غیرملکی گھریلو ملازم رکھنے کیلئے نئے قوانین متعارف

سعودی عرب میں غیرملکی گھریلو ملازم رکھنے کیلئے نئے قوانین متعارف
کیپشن: Saudi Arabia domestic worker
سورس: ویب ڈیسک

ویب ڈیسک: سعودی عرب کے حکام نے اپنے شہریوں کے لیے گھریلو ملازم بھرتی کرنے کے حوالے سے نئی ہدایات جاری کی ہیں۔

غیرملکی میڈیا رپورٹس کے مطابق سعودی حکومت نے ہدایات جاری کی ہیں کہ گھریلو ملازم کو ملازمت دینے کے لیے کسی غیر شادی شدہ شخص کی عمر کم از کم 24 سال ہونی چاہیے، جبکہ گھریلو ملازم کے لیے ویزا جاری کرنے کے لیے اس کی اہلیت کی تصدیق اس عمل کے حصے کے طور پر کی جائے گی۔

آجر کو وزارت انسانی وسائل کے ذریعے گھریلو ملازم کے پیشہ اور قومیت کا انتخاب کرنے اور بھرتی کے دفتر کی وضاحت کرنے والی متعلقہ درخواست جمع کروانے کی ضرورت ہوگی۔

گھریلو ملازمین کے معاہدے میں تاریخوں کا حساب گریگورین کیلنڈر کے مطابق کیا جائے گا۔ضابطے آجر کے واجب الادا واجبات پر بھی روشنی ڈالتے ہیں۔

سعودی عرب نے اکتوبر 2023 میں گھریلو ملازمین کی خدمات حاصل کرنے کے لیے نئے قوانین متعارف کرائے تھے جس کے مطابق مزدور کی کم از کم عمر 21 سال ہوگی۔

ایک مقررہ مدت کا ذکر نہ ہونے کی صورت میں کام کرنے والے کارکن کی تاریخ سے ایک سال تک معاہدہ قابل تجدید سمجھا جائے گا۔

ہاؤس ہیلپ کے روزانہ کام کے اوقات 10 گھنٹے مقرر کیے گئے تھے جب کہ وہ ہفتہ وار تنخواہ کے بعد لگاتار 24 گھنٹے آرام کا حقدار ہوگا۔

قواعد و ضوابط آجر کو گھریلو ملازم کا پاسپورٹ، دیگر ذاتی دستاویزات یا سامان روکنے سے منع کرتے ہیں۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ مملکت میں گھریلو ملازمین میں گھریلو ملازمہ، ڈرائیور، گھریلو ملازمہ، کلینر، باورچی، گارڈ، کسان، لیو ان نرسیں، ٹیوٹر اور آیا شامل ہیں۔