22 جولائی کو جو بھی جیتے گا ،اسے قبول کریں گے، حمزہ شہباز

22 جولائی کو جو بھی جیتے گا ،اسے قبول کریں گے، حمزہ شہباز
وزیراعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز نے کہا ہے کہ عدالت اورعوام کے فیصلوں کا احترام کرتے ہیں۔گزشتہ تین ماہ سے پنجاب آئینی بحران کا شکارہے۔22 جولائی کو جو بھی جیتے گا ،اسے قبول کریں گے۔ سپریم کورٹ کے فیصلے پر ردعمل دیتے ہوئے وزیراعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز کا کہنا تھا کہ ضمنی انتخابات میں عوام مسلم لیگ ن کی قیادت پراعتماد کا اظہار کریں گے۔ اس سے قبل سپریم کورٹ نے فیصلہ دیا کہ وزیر اعلی کا الیکشن ضمنی انتخاب کے بعد 22 جولائی کو ہوگا، حمزہ شہباز شریف نے بھی 22 جولائی کہ تاریخ قبول کرلی، تمام فریقین کی مدد سے مسئلہ حل ہو گیا۔ ہم تحریری حکمنامہ کل جاری کردینگے. سپریم کورٹ نے فیصلہ دیا ہے کہ وزیراعلیٰ پنجاب کا دوبارہ انتخاب 22 جولائی کو ہوگا۔قبل ازیں سپریم کورٹ نے دو آپشنز دیے تھے، دو دن میں وزیراعلیٰ پنجاب کا دوبارہ انتخاب کرایا جائے یا پھر حمزہ شہباز 17 جولائی تک وزیراعلیٰ رہیں۔ سابق وزیراعظم عمران خان نے حمزہ شہباز کو 17 جولائی تک قائم مقام وزیراعلیٰ پنجاب قبول کرنے پر آمادگی ظاہر کردی۔ حکومتی وکیل بابر اعوان نے وقفہ سماعت کے بعد عدالت کو بتایا کہ عمران خان نے کہا ہے کہ شفاف ضمنی انتخابات اور مخصوص نشستوں کے نوٹیفکیشن تک حمزہ بطور وزیراعلی قبول ہیں. شفاف ضمنی انتخابات اور مخصوص نشستوں کے نوٹیفکیشن تک حمزہ بطور وزیراعلی قبول ہیں. وزیراعلیٰ پنجاب کے انتخاب کے معاملے پر لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ میں پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی درخواست پر سماعت سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں ہو رہی ہے۔ سماعت کے دوران سپریم کورٹ نے دو آپشنز دیے، دو دن میں وزیراعلیٰ پنجاب کا دوبارہ انتخاب کرایا جائے یا پھر حمزہ شہباز 17 جولائی تک وزیراعلیٰ رہیں۔چیف جسٹس آف پاکستان نے کہا کہ یہی دو آپشن ہیں یا حمزہ کو وزیراعلیٰ تسلیم کرنا ہوگا یا پھرمناسب وقت میں دوبارہ الیکشن ہوگا، پکڑ دھکڑ نہیں ہوگی یہ احکامات ہم جاری کریں گے۔ سماعت میں وقفے کے دوران پی ٹی آئی کی قانونی ٹیم چیئرمین تحریک انصاف عمران خان سے ان کی رائے جاننے کیلئے گئے اور سماعت کا احوال سنایا۔ سپریم کورٹ میں سماعت دوبارہ شروع ہوئی تو پی ٹی آئی کے وکیل بابر اعوان نے عدالت کو بتایا کہ ان کی اس معاملے پر عمران خان سے بات ہوئی ہے، عمران خان نے کہا ہے کہ وہ ملکی اداروں کا احترام کرتے ہیں۔بابر اعوان نے مزید بتایا کہ عمران خان نے حمزہ شہباز کو قائم مقام وزیر اعلیٰ کے طور پر 17 جولائی تک قبول کیا ہے لیکن عمران خان کا کہنا ہے کہ آئی جی پولیس قانون پر عمل کریں، عمران خان کا کہنا ہے پنجاب الیکشن کمشنر اور چیف سیکرٹری قانون پر عمل کریں۔عمران خان کا کہنا ہے جن حلقوں سے الیکشن لڑ رہے ہیں وہاں پبلک فنڈز استعمال نہیں ہوں گے۔
ایڈیٹر

احمد علی کیف نے یونیورسٹی آف لاہور سے ایم فل کی ڈگری حاصل کر رکھی ہے۔ پبلک نیوز کا حصہ بننے سے قبل 24 نیوز اور سٹی 42 کا بطور ویب کانٹینٹ ٹیم لیڈ حصہ رہ چکے ہیں۔