589 ارب روپے کی بجلی چوری یا بل ادا نہیں کیے جارہے،نگراں وزیرِ توانائی

589 ارب روپے کی بجلی چوری یا بل ادا نہیں کیے جارہے،نگراں وزیرِ توانائی
نگراں وزیرِ توانائی محمد علی کا کہنا ہے کہ کہ 589 ارب روپے کی بجلی چوری یا بل ادا نہیں کیے جار ہے ہیں۔ ملک میں بجلی کے بلوں سے متعلق بیان میں نگراں وزیرِ توانائی محمد علی نے بتایا کہ ہر علاقے میں الگ الگ سطح پر بجلی چوری کی جا رہی ہے، بجلی چوری یا بل کی ادائیگی نہ کرنے کے باعث دیگر صارفین پر بوجھ پڑتا ہے۔ محمد علی کا کہنا تھا کہ جب تک بجلی چوری ختم نہیں ہوتی ہے اور لوگ بل ادا نہیں کرتے ہیں تب تک لوگوں کو سستی بجلی نہیں ملے گی، نگراں وزیراعظم نے بجلی چوری کی روک تھام کے لیے کریک ڈاؤن کی ہدایت بھی کی ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ جو بجلی کے بل ادا نہیں کرتے ان سے ریکوری کریں گے۔ اسلام آباد، لاہور، گوجرانوالہ، فیصل آباد اور ملتان ڈسکوز میں 100 ارب کا نقصان ہوتا ہے، ان پانچ ڈسکوز میں سے 3044 ارب کی بلنگ ہوتی ہے اور 100 ارب کا نقصان ہوتا ہے۔ محمد علی نے مزید کہا ہے کہ پشاور، حیدرآباد، کوئٹہ، سکھر، قبائلی علاقوں اور آزاد کشمیر ڈسکوز میں 489 ارب کا نقصان ہوتا ہے، ان پانچ ڈسکوز کے 737 ارب کی بلنگ میں سے 489 ارب کا نقصان ہوتا ہے۔
ایڈیٹر

احمد علی کیف نے یونیورسٹی آف لاہور سے ایم فل کی ڈگری حاصل کر رکھی ہے۔ پبلک نیوز کا حصہ بننے سے قبل 24 نیوز اور سٹی 42 کا بطور ویب کانٹینٹ ٹیم لیڈ حصہ رہ چکے ہیں۔